Skip to main content

كَذَّبَتْ ثَمُوْدُ بِالنُّذُرِ

كَذَّبَتْ
جھٹلایا
ثَمُودُ
ثمود نے
بِٱلنُّذُرِ
ڈراووں کو۔ تنبیہات کو

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

ثمود نے تنبیہات کو جھٹلایا

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

ثمود نے تنبیہات کو جھٹلایا

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

ثمود نے رسولوں کو جھٹلایا

احمد علی Ahmed Ali

قوم ثمود نے بھی ڈرانے والوں کو جھٹلایا تھا

أحسن البيان Ahsanul Bayan

قوم ثمود نے ڈرانے والوں کو جھٹلایا۔

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

ثمود نے بھی ہدایت کرنے والوں کو جھٹلایا

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

قوم ﺛمود نے ڈرانے والوں کو جھٹلایا

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

قومِ ثمود نے ڈرانے والوں (پیغمبروں(ع)) کو جھٹلایا۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

اور ثمود نے بھی پیغمبروں علیھ السّلام کو جھٹلایا

طاہر القادری Tahir ul Qadri

(قومِ) ثمود نے بھی ڈرسنانے والے پیغمبروں کو جھٹلایا،

تفسير ابن كثير Ibn Kathir

فریب نظر کے شکار لوگ
ثمودیوں نے رسول اللہ حضرت صالح (علیہ السلام) کو جھٹلایا اور تعجب کے طور پر محال سمجھ کر کہنے لگے کہ یہ کیسے ہوسکتا ہے کہ ہم ہمیں میں سے ایک شخص کے تابعدار بن جائیں ؟ آخر اس کی اتنی بڑی فضیلت کی کیا وجہ ؟ پھر اس سے آگے بڑھے اور کہنے لگے ہم نہیں مان سکتے کہ ہم سب میں سے صرف اسی ایک پر اللہ کی باتیں نازل کی جائیں، پھر اس سے بھی قدم بڑھایا اور نبی اللہ کو کھلے لفظوں میں جھوٹا اور پرلے سرے کا جھوٹا کہا بطور ڈانٹ کے اللہ فرماتا ہے اب تو جو چاہو کہہ لو لیکن کل کھل جائے گا کہ دراصل جھوٹا اور جھوٹ میں حد سے بڑھ جانے والا کون تھا ؟ ان کی آزمائش کے لئے فتنہ بنا کر ہم ایک اونٹنی بھیجنے والے ہیں چناچہ ان لوگوں کی طلب کے موافق پتھر کی ایک سخت چٹان میں سے ایک چکلے چوڑے اعضاء والی گابھن اونٹنی نکلی اور اللہ تعالیٰ نے اپنے نبی سے فرمایا کہ تم اب دیکھتے رہو کہ ان کا انجام کیا ہوتا ہے اور ان کی سختیوں پر صبر کرو دنیا اور آخرت میں انجام کار غلبہ آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ہی کا رہے گا اب ان سے کہہ دیجئے کہ پانی پر ایک دن تو ان کا اختیار ہوگا اور ایک دن اس اونٹنی کا۔ جیسے اور آیت میں ہے آیت ( قَالَ هٰذِهٖ نَاقَةٌ لَّهَا شِرْبٌ وَّلَكُمْ شِرْبُ يَوْمٍ مَّعْلُوْمٍ\015\05ۚ ) 26 ۔ الشعراء ;155) ہر باری موجود کی گئی ہے یعنی جب اونٹنی نہ ہو تو پانی موجود ہے اور جب اونٹنی ہو تو اس کا دودھ حاضر ہے انہوں نے مل جل کر اپنے رفیق قدار بن سالف کو آواز دی اور یہ بڑا ہی بدبخت تھا، جیسے اور آیت میں ہے آیت ( اِذِ انْۢبَعَثَ اَشْقٰىهَا 12۝۽) 91 ۔ الشمس ;12) ان کا بدترین آدمی اٹھا اس نے آکر اسے پکڑا اور زخمی کیا پھر تو ان کے کفر و تکذیب کا میں نے بھی پورا بدلہ لیا اور جس طرح کھیتی کے کٹے ہوئے سوکھے پتے اڑ اڑ کر کافور ہوجاتے ہیں انہیں بھی ہم نے بےنام و نشان کردیا، خشک چارہ جس طرح جنگل میں اڑتا پھرتا ہے اسی میں انہیں بھی برباد کردیا۔ یا یہ مطلب ہے کہ عرب میں دستور تھا کہ اونٹوں کو خشک کانٹوں دار باڑے میں رکھ لیا کرتے تھے۔ جب اس باڑھ کو روندھ دیا جائے اس وقت اس کی جیسی حالت ہوجاتی ہے وہی حالت ان کی ہوگئی کہ ایک بھی نہ بچا نہ بچ سکا۔ جیسے مٹی دیوار سے جھڑ جاتی ہے اسی طرح ان کے بھی پر پرزے اکھڑ گئے یہ سب اقوال مفسرین کے اس جملہ کی تفسیریں ہیں لیکن اول قوی ہے واللہ اعلم۔