Skip to main content

مِنْ نُّطْفَةٍۗ خَلَقَهٗ فَقَدَّرَهٗ ۙ

مِن
سے
نُّطْفَةٍ
ایک نطفے (سے)
خَلَقَهُۥ
اس نے پیدا کیا اس کو
فَقَدَّرَهُۥ
پھر تقدیر مقرر کی اس کی

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

نطفہ کی ایک بوند سے اللہ نے اِسے پیدا کیا، پھر اِس کی تقدیر مقرر کی

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

نطفہ کی ایک بوند سے اللہ نے اِسے پیدا کیا، پھر اِس کی تقدیر مقرر کی

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

پانی کی بوند سے اسے پیدا فرمایا، پھر اسے طرح طرح کے اندازوں پر رکھا

احمد علی Ahmed Ali

ایک بوند سے اس کوبنایا پھر اس کا اندزہ ٹھیرایا

أحسن البيان Ahsanul Bayan

(اسے) ایک نطفہ سے (١) پھر اندازہ پر رکھا اس کو۔

١٩۔١ یعنی جس کی پیدائش ایسے حقیر قطرہ آب سے ہوئی ہے، کیا اسے تکبر زیب دیتا ہے۔

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

نطفے سے بنایا پھر اس کا اندازہ مقرر کیا

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

(اسے) ایک نطفہ سے، پھر اندازه پر رکھا اس کو

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

نطفہ سے اسے پیدا کیا ہے اور پھر اس کے اعضاء و جوا رح کا اندازہ مقرر کیا ہے۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

اسے نطفہ سے پیدا کیا ہے پھر اس کا اندازہ مقرر کیا ہے

طاہر القادری Tahir ul Qadri

نطفہ میں سے اس کو پیدا فرمایا، پھر ساتھ ہی اس کا (خواص و جنس کے لحاظ سے) تعین فرما دیا،