Skip to main content

مِنْ شَرِّ الْوَسْوَاسِۙ الْخَـنَّاسِۖ

مِن
سے
شَرِّ
شر
ٱلْوَسْوَاسِ
وسوسہ ڈالنے والے
ٱلْخَنَّاسِ
بار بار پلٹ کر آنے والے کے

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

اُس وسوسہ ڈالنے والے کے شر سے جو بار بار پلٹ کر آتا ہے

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

اُس وسوسہ ڈالنے والے کے شر سے جو بار بار پلٹ کر آتا ہے

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

اس کے شر سے جو دل میں برے خطرے ڈالے اور دبک رہے

احمد علی Ahmed Ali

اس شیطان کے شر سے جووسوسہ ڈال کر چھپ جاتا ہے

أحسن البيان Ahsanul Bayan

وسوسہ ڈالنے والے پیچھے ہٹ جانے والے کے شر سے۔ (١)

٤۔۱ الوسواس، بعض کے نزدیک اسم فاعل الموسوس کے معنی میں ہے اور بعض کے نزدیک یہ ذی الوسواس ہے۔ وسوسہ، مخفی آواز کو کہتے ہیں، شیطان بھی نہایت غیر محسوس طریقوں سے انسان کے دل میں بری باتیں ڈال دیتا ہے اسی کو وسوسہ کہتے ہیں۔ الخناس (کھسک جانے والا یہ شیطان کی صفت ہے۔ جب اللہ کا ذکر کیا جائے تو یہ کھسک جاتا ہے اور اللہ کی یاد سے غفلت برتی جائے تو دل پر چھا جاتا ہے)

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

(شیطان) وسوسہ انداز کی برائی سے جو (خدا کا نام سن کر) پیچھے ہٹ جاتا ہے

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

وسوسہ ڈالنے والے پیچھے ہٹ جانے والے کے شر سے

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

بار بار وسوسہ ڈالنے بار بار پسپا ہونے والے کے شر سے۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

شیطانی وسواس کے شر سے جو نام خدا سن کر پیچھے ہٹ جاتا ہے

طاہر القادری Tahir ul Qadri

وسوسہ انداز (شیطان) کے شر سے جو (اﷲ کے ذکر کے اثر سے) پیچھے ہٹ کر چھپ جانے والا ہے،