Skip to main content

تَلْفَحُ وُجُوْهَهُمُ النَّارُ وَهُمْ فِيْهَا كٰلِحُوْنَ

تَلْفَحُ
جھلسا دے گی
وُجُوهَهُمُ
ان کے چہروں کو
ٱلنَّارُ
آگ
وَهُمْ
اور وہ
فِيهَا
اس میں
كَٰلِحُونَ
تیوری چڑھانے والے ہیں

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

آگ ان کے چہروں کی کھال چاٹ جائے گی اور اُن کے جبڑے باہر نکل آئیں گے

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

آگ ان کے چہروں کی کھال چاٹ جائے گی اور اُن کے جبڑے باہر نکل آئیں گے

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

ان کے منہ پر آگ لپیٹ مارے گی اور وہ اس میں منہ چڑائے ہوں گے

احمد علی Ahmed Ali

ان کے مونہوں کو آگ جھلس دے گی اور وہ اس میں بدشکل ہونے والے ہوں گے

أحسن البيان Ahsanul Bayan

ان کے چہروں کو آگ جھلستی رہے گی (١) اور وہ وہاں بد شکل بنے ہوئے ہونگے (٢)۔

١٠٤۔١ چہرے کا ذکر اس لئے کیا ہے کہ یہ انسانی وجود کا سب سے اہم اور اشرف حصہ ہے، ورنہ جہنم تو پورے جسم کو ہی محیط ہوگی۔
١٠٤۔٢ کَلَحً کے معنی ہوتے ہیں ہونٹ سکڑ کر دانت ظاہر ہو جائیں۔ ہونٹ گویا دانتوں کا لباس ہیں، جب یہ جہنم کی آگ سے سمٹ اور سکڑ جائیں گے تو دانت ظاہر ہو جائیں گے، جس سے انسان کی صورت بدشکل اور ڈراؤنی ہو جائے گی۔

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

آگ ان کے مونہوں کو جھلس دے گی اور وہ اس میں تیوری چڑھائے ہوں گے

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

ان کے چہروں کو آگ جھلستی رہے گی اور وه وہاں بدشکل بنے ہوئے ہوں گے

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

آگ ان کے چہروں کو جھلسا رہی ہوگی اور ان کی شکلیں اس میں بگڑ گئی ہوں گی۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

جہنمّ کی آگ ان کے چہروں کو جھلس دے گی اور وہ اسی میں منہ بنائے ہوئے ہوں گے

طاہر القادری Tahir ul Qadri

ان کے چہروں کو آگ جھلس دے گی اور وہ اس میں دانت نکلے بگڑے ہوئے منہ کے ساتھ پڑے ہوں گے،