Skip to main content

قُلْ جَاۤءَ الْحَـقُّ وَمَا يُبْدِئُ الْبَاطِلُ وَمَا يُعِيْدُ

قُلْ
کہہ دیجئے
جَآءَ
آگیا
ٱلْحَقُّ
حق
وَمَا
اور نہیں
يُبْدِئُ
پیدا کرتا (پہلی بار)
ٱلْبَٰطِلُ
باطل
وَمَا
اور نہ
يُعِيدُ
اعادہ کرتا ہے

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

کہو "حق آگیا ہے اور اب باطل کے کیے کچھ نہیں ہو سکتا"

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

کہو "حق آگیا ہے اور اب باطل کے کیے کچھ نہیں ہو سکتا"

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

تم فرماؤ حق آیا اور باطل نہ پہل کرے اور نہ پھر کر آئے

احمد علی Ahmed Ali

کہہ دو حق آ گیا ہے اور جھوٹے معبود نہ پہلی بار پیدا کرتے ہیں اور نہ دوبارہ پیدا کریں گے

أحسن البيان Ahsanul Bayan

کہہ دیجئے! کہ حق آچکا باظل نہ پہلے کچھ کر سکا ہے اور نہ کرسکے گا (١)۔

٤٩۔١ حق سے مراد قرآن اور باطل سے مراد کفر و شرک ہے۔ مطلب ہے اللہ کی طرف سے اللہ کا دین اور اس کا قرآن آگیا ہے۔ جس سے باطل ختم ہوگیا ہے، اب وہ سر اٹھانے کے قابل نہیں رہا ہے۔

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

کہہ دو کہ حق آچکا اور (معبود) باطل نہ تو پہلی بار پیدا کرسکتا ہے اور نہ دوبارہ پیدا کرے گا

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

کہہ دیجیئے کہ حق آچکا باطل نہ تو پہلے کچھ کرسکا ہے اور نہ کرسکے گا

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

آپ(ص) کہہ دیجئے! حق آگیا ہے اور باطل نہ کچھ ایجاد کر سکتا ہے اور نہ دوبارہ پلٹا سکتا ہے (بالکل مٹ گیا ہے)۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

آپ کہہ دیجئے کہ حق آگیا ہے اور باطل نہ کچھ ایجاد کرسکتا ہے اور نہ دوبارہ پلٹا سکتا ہے

طاہر القادری Tahir ul Qadri

فرما دیجئے: حق آگیا ہے اور باطل نہ (کچھ) پہلی بار پیدا کر سکتا ہے اور نہ دوبارہ پلٹا سکتا ہے،