Skip to main content

فَطَافَ عَلَيْهَا طَاۤٮِٕفٌ مِّنْ رَّبِّكَ وَهُمْ نَاۤٮِٕمُوْنَ

فَطَافَ
تو پھر گیا
عَلَيْهَا
اس پر
طَآئِفٌ
ایک پھرنے والا
مِّن
طرف سے
رَّبِّكَ
تیرے رب کی
وَهُمْ
اور وہ
نَآئِمُونَ
سو رہے تھے

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

رات کو وہ سوئے پڑے تھے کہ تمہارے رب کی طرف سے ایک بلا اس باغ پر پھر گئی

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

رات کو وہ سوئے پڑے تھے کہ تمہارے رب کی طرف سے ایک بلا اس باغ پر پھر گئی

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

تو اس پر تیرے رب کی طرف سے ایک پھیری کرنے والا پھیرا کر گیا اور وہ سوتے تھے،

احمد علی Ahmed Ali

پھر تو اس پر رات ہی میں آپ کے رب کی طرف سے ایک جھونکا چل گیا درآنحالیکہ وہ سونے والے تھے

أحسن البيان Ahsanul Bayan

پس اس پر تیرے رب کی جانب سے ایک بلا چاروں طرف گھوم گئی اور یہ سو رہے تھے (١)

١٩۔١ بعض کہتے ہیں، راتوں رات اسے آگ لگ گئی، بعض کہتے ہیں، جبرائیل علیہ السلام نے آکر اسے تہس نہس کر دیا۔

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

سو وہ ابھی سو ہی رہے تھے کہ تمہارے پروردگار کی طرف سے (راتوں رات) اس پر ایک آفت پھر گئی

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

پس اس پر تیرے رب کی جانب سے ایک بلا چاروں طرف گھوم گئی اور یہ سو ہی رہے تھے

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

پھر (راتوں رات) جب کہ وہ لوگ ابھی سوئے ہوئے تھے آپ(ص) کے پروردگار کی طرف سے ایک آفت چکر لگا گئی۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

تو خدا کی طرف سے راتوں رات ایک بلا نے چکر لگایا جب یہ سب سورہے تھے

طاہر القادری Tahir ul Qadri

پس آپ کے رب کی جانب سے ایک پھرنے والا (عذاب رات ہی رات میں) اس (باغ) پر پھر گیا اور وہ سوتے ہی رہے،