Skip to main content

فَاَمَّا مَنْ ثَقُلَتْ مَوَازِيْنُهٗ ۙ

فَأَمَّا
تو رہا
مَن
وہ جس کے
ثَقُلَتْ
بھاری ہوئے
مَوَٰزِينُهُۥ
پلڑے اس کے

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

پھر جس کے پلڑے بھاری ہوں گے

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

پھر جس کے پلڑے بھاری ہوں گے

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

تو جس کی تولیں بھاری ہوئیں

احمد علی Ahmed Ali

تو جس کے اعمال (نیک) تول میں زیادہ ہوں گے

أحسن البيان Ahsanul Bayan

پھر جس کے پلڑے بھاری ہونگے۔ (۱)

٦۔۱ موازین، میزان کی جمع ہے۔ ترازو، جس میں صحائف اعمال تولے جائیں گے۔ جیسا کہ اس کا ذکر (وَالْوَزْنُ يَوْمَىِٕذِۨ الْحَقُّ ۚ فَمَنْ ثَقُلَتْ مَوَازِيْنُهٗ فَاُولٰۗىِٕكَ هُمُ الْمُفْلِحُوْنَ Ď۝) 7۔الاعراف;8) (اُولٰۗىِٕكَ الَّذِيْنَ كَفَرُوْا بِاٰيٰتِ رَبِّهِمْ وَلِقَاۗىِٕهٖ فَحَبِطَتْ اَعْمَالُهُمْ فَلَا نُقِيْمُ لَهُمْ يَوْمَ الْقِيٰمَةِ وَزْنًا ١٠٥؁) 18۔الکہف;105) اور (وَنَضَعُ الْمَوَازِيْنَ الْقِسْطَ لِيَوْمِ الْقِيٰمَةِ فَلَا تُظْلَمُ نَفْسٌ شَـيْــــــًٔا ۭ وَ اِنْ كَانَ مِثْقَالَ حَبَّةٍ مِّنْ خَرْدَلٍ اَتَيْنَا بِهَا ۭ وَكَفٰى بِنَا حٰسِـبِيْنَ 47؀) 21۔الانبیاء;47) میں بھی گزراہے۔ بعض کہتے ہیں کہ یہاں یہ میزان نہیں، موزون کی جمع ہے یعنی ایسے اعمال جن کی اللہ کے ہاں کوئی اہمیت اور خاص وزن ہوگا (فتح القدیر) لیکن پہلا مفہوم ہی راجح اور صحیح ہے۔ مطلب یہ ہے کہ جن کی نیکیاں زیادہ ہوں گی تو وزن اعمال کے وقت ان کی نیکیوں والا پلڑا بھاری ہو جائے گا۔

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

تو جس کے (اعمال کے) وزن بھاری نکلیں گے

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

پھر جس کے پلڑے بھاری ہوں گے

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

تو جس کی (نیکیوں کے) پلڑے بھاری ہوں گے۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

تو اس دن جس کی نیکیوں کا پلّہ بھاری ہوگا

طاہر القادری Tahir ul Qadri

پس وہ شخص کہ جس (کے اعمال) کے پلڑے بھاری ہوں گے،