Skip to main content

لَلَبِثَ فِىْ بَطْنِهٖۤ اِلٰى يَوْمِ يُبْعَثُوْنَۚ

لَلَبِثَ
البتہ وہ ٹھہرے رہتے
فِى
میں (مچھلی کے)
بَطْنِهِۦٓ
اس کے پیٹ
إِلَىٰ
تک
يَوْمِ
اس دن
يُبْعَثُونَ
جب سب اٹھائے جائیں گے

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

روز قیامت تک اسی مچھلی کے پیٹ میں رہتا

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

روز قیامت تک اسی مچھلی کے پیٹ میں رہتا

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

ضرور اس کے پیٹ میں رہتا جس دن تک لوگ اٹھائے جائیں گے

احمد علی Ahmed Ali

تو وہ اس کے پیٹ میں اس دن تک رہتا جس میں لوگ اٹھائے جائیں گے

أحسن البيان Ahsanul Bayan

تو لوگوں کے اٹھائے جانے کے دن تک اس کے پیٹ میں ہی رہتے (١)

١٤٤۔١ یعنی توبہ استغفار اور اللہ کی تسبیح بیان نہ کرتے، (جیسا کہ انہوں نے کہا (وَدَاوٗدَ وَسُلَيْمٰنَ اِذْ يَحْكُمٰنِ فِي الْحَرْثِ اِذْ نَفَشَتْ فِيْهِ غَنَمُ الْقَوْمِ ۚ وَكُنَّا لِحُـكْمِهِمْ شٰهِدِيْنَ) 21۔ الانبیاء;78) تو قیامت تک وہ مچھلی کے پیٹ میں ہی رہتے۔

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

تو اس روز تک کہ لوگ دوبارہ زندہ کئے جائیں گے اسی کے پیٹ میں رہتے

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

تو لوگوں کے اٹھائے جانے کے دن تک اس کے پیٹ میں ہی رہتے

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

تو (دوبارہ) اٹھائے جانے والے دن (قیامت) تک اسی (مچھلی) کے پیٹ میں رہتے۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

تو روزِ قیامت تک اسی کے شکم میں رہ جاتے

طاہر القادری Tahir ul Qadri

تو اس (مچھلی) کے پیٹ میں اُس دن تک رہتے جب لوگ (قبروں سے) اٹھائے جائیں گے،