Skip to main content

فَذَرْهُمْ حَتّٰى يُلٰقُوْا يَوْمَهُمُ الَّذِىْ فِيْهِ يُصْعَقُوْنَۙ

فَذَرْهُمْ
پس چھوڑو ان کو
حَتَّىٰ
یہاں تک کہ
يُلَٰقُوا۟
وہ جا ملیں
يَوْمَهُمُ
اپنے دن سے
ٱلَّذِى
وہ جو
فِيهِ
اس میں
يُصْعَقُونَ
بےہوش کیے جائیں گے

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

پس اے نبیؐ، اِنہیں اِن کے حال پر چھوڑ دو یہاں تک کہ یہ اپنے اُس دن کو پہنچ جائیں جس میں یہ مار گرائے جائیں گے

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

پس اے نبیؐ، اِنہیں اِن کے حال پر چھوڑ دو یہاں تک کہ یہ اپنے اُس دن کو پہنچ جائیں جس میں یہ مار گرائے جائیں گے

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

تو تم انہیں چھوڑ دو یہاں تک کہ وہ اپنے اس دن سے ملیں جس میں بے ہوش ہوں گے

احمد علی Ahmed Ali

پس آپ انہیں چھوڑ دیجیئے یہاں تک کہ وہ اپنا وہ دن دیکھ لیں جس میں وہ بے ہوش ہو کر گر پڑیں گے

أحسن البيان Ahsanul Bayan

تو انہیں چھوڑ دے یہاں تک کہ انہیں اس دن سے سابقہ پڑے جس میں یہ بےہوش کر دیئے جائیں گے۔

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

پس ان کو چھوڑ دو یہاں تک کہ وہ روز جس میں وہ بےہوش کردیئے جائیں گے، سامنے آجائے

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

تو انہیں چھوڑ دے یہاں تک کہ انہیں اس دن سے سابقہ پڑے جس میں یہ بے ہوش کر دیئے جائیں گے

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

پس انہیں (اپنے حال پر) چھوڑ دیجئے یہاں تک کہ وہ اپنے اس دن تک پہنچ جائیں جس میں وہ غش کھا کر گر جائیں گے۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

تو انہیں ان کے حال پر چھوڑ دیجئے یہاں تک کہ وہ دن دیکھ لیں جس دن بیہوش ہوجائیں گے

طاہر القادری Tahir ul Qadri

سو آپ اُن کو (اُن کے حال پر) چھوڑ دیجئے یہاں تک کہ وہ اپنے اس دن سے آملیں جس میں وہ ہلاک کر دیئے جائیں گے،