Skip to main content

لَّذِيْنَ كَانَتْ اَعْيُنُهُمْ فِىْ غِطَاۤءٍ عَنْ ذِكْرِىْ وَكَانُوْا لَا يَسْتَطِيْعُوْنَ سَمْعًا

ٱلَّذِينَ
وہ لوگ
كَانَتْ
تھیں
أَعْيُنُهُمْ
ان کی آنکھیں
فِى
میں
غِطَآءٍ
پردے (میں)
عَن
سے
ذِكْرِى
میرے ذکر (سے)
وَكَانُوا۟
اور تھے وہ
لَا
نہ
يَسْتَطِيعُونَ
استطاعت رکھتے
سَمْعًا
سننے کی

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

اُن کافروں کے سامنے جو میری نصیحت کی طرف سے اندھے بنے ہوئے تھے اور کچھ سننے کے لیے تیار ہی نہ تھے

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

اُن کافروں کے سامنے جو میری نصیحت کی طرف سے اندھے بنے ہوئے تھے اور کچھ سننے کے لیے تیار ہی نہ تھے

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

وہ جن کی آنکھوں پر میری یاد سے پردہ پڑا تھا اور حق بات سن نہ سکتے تھے

احمد علی Ahmed Ali

جن کی آنکھوں پر ہماری یاد سے پردہ پڑا ہوا تھا اور وہ سن بھی نہ سکتے تھے

أحسن البيان Ahsanul Bayan

جن کی آنکھیں میری یاد سے پردے میں تھیں اور (امر حق) سن بھی نہیں سکتے تھے۔

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

جن کی آنکھیں میری یاد سے پردے میں تھیں اور وہ سننے کی طاقت نہیں رکھتے تھے

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

جن کی آنکھیں میری یاد سے پردے میں تھی اور (امر حق) سن بھی نہیں سکتے تھے

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

جن کی آنکھوں پر میری یاد سے پردہ پڑا ہوا تھا (کہ میری آیات نہیں دیکھتے تھے) اور وہ سن نہیں سکتے تھے۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

وہ کافر جن کی نگاہیں ہمارے ذکر کی طرف سے پردہ میں تھیں اور وہ کچھ صَننا بھی نہیں چاہتے تھے

طاہر القادری Tahir ul Qadri

وہ لوگ جن کی آنکھیں میری یاد سے حجابِ (غفلت) میں تھیں اور وہ (میرا ذکر) سن بھی نہ سکتے تھے،