Skip to main content

اَوْفُوا الْـكَيْلَ وَلَا تَكُوْنُوْا مِنَ الْمُخْسِرِيْنَۚ

أَوْفُوا۟
پورا کرو
ٱلْكَيْلَ
ناپ کو
وَلَا
اور نہ
تَكُونُوا۟
تم ہوجاؤ
مِنَ
میں سے
ٱلْمُخْسِرِينَ
خسارہ دینے والوں

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

پیمانے ٹھیک بھرو اور کسی کو گھاٹا نہ دو

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

پیمانے ٹھیک بھرو اور کسی کو گھاٹا نہ دو

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

ناپ پورا کرو اور گھٹانے والوں میں نہ ہو

احمد علی Ahmed Ali

پیمانہ پورا دو اور نقصان دینے والے نہ بنو

أحسن البيان Ahsanul Bayan

ناپ پورا بھرا کرو کم دینے والوں میں شمولیت نہ کرو (١)

١٨١۔١ یعنی جب تم لوگوں کو ناپ کر دو تو اسی طرح پورا دو، جس طرح لیتے وقت تم پورا ناپ کر لیتے ہو۔ لینے اور دینے کے پیمانے الگ الگ مت رکھو، کہ دیتے وقت کم دو اور لیتے وقت پورا لو!

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

(دیکھو) پیمانہ پورا بھرا کرو اور نقصان نہ کیا کرو

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

ناپ پورا بھرا کرو کم دینے والوں میں شمولیت نہ کرو

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

(دیکھو) پورا ناپا کرو (پیمانہ بھرا کرو) اور نقصان پہنچانے والوں میں سے نہ ہو۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

اور دیکھو ناپ تول کو ٹھیک رکھو اور لوگوں کو خسارہ دینے والے نہ بنو

طاہر القادری Tahir ul Qadri

تم پیمانہ پورا بھرا کرو اور (لوگوں کے حقوق کو) نقصان پہنچانے والے نہ بنو،

تفسير ابن كثير Ibn Kathir

ڈنڈی مار قوم
حضرت شعیب (علیہ السلام) اپنی قوم کو ناپ تول درست کرنے کی ہدایت کررہے ہیں۔ ڈنڈی مارنے اور ناپ تول میں کمی کرنے سے روکتے ہیں اور فرماتے ہیں کہ جب کسی کو کوئی شے ناپ کردو تو پورا پیمانہ بھر کردو اس کے حق سے کم نہ کرو۔ اسی طرح دوسرے سے جب لو تو زیادہ لینے کی کوشش اور تدبیر نہ کرو۔ یہ کیا کہ لینے کے وقت پورا لو اور دینے کے وقت کم دو ؟ لین دین دونوں صاف اور پورا رکھو۔ ترازو اچھی رکھو جس میں تول صحیح آئے بٹے بھی پورے رکھو تول میں عدل کرو ڈنڈی نہ مارو کم نہ تولو کسی کو اسکی چیز کم نہ دو ۔ کسی کی راہ نہ مارو چوری چکاری لوٹ مار غارتگری رہزنی سے بچو لوگوں کو ڈرا دھمکا کر خوفزدہ کرکے ان سے مال نہ لوٹو۔ اس اللہ کے عذابوں کا خوف رکھو جس نے تمہیں اور سب اگلوں کو پیدا کیا ہے۔ جو تمہارے اور تمہارے بڑوں کا رب ہے یہی لفظ آیت ( وَلَقَدْ اَضَلَّ مِنْكُمْ جِبِلًّا كَثِيْرًا ۭ اَفَلَمْ تَكُوْنُوْا تَـعْقِلُوْنَ 62؀) 36 ۔ يس ;62) میں بھی اسی معنی میں ہے۔