Skip to main content

وَالْاَرْضَ فَرَشْنٰهَا فَنِعْمَ الْمٰهِدُوْنَ

وَٱلْأَرْضَ
اور زمین کو
فَرَشْنَٰهَا
بچھایا ہم نے اس کو
فَنِعْمَ
تو کتنے اچھے
ٱلْمَٰهِدُونَ
بچھانے والے ہیں۔ ہموار کرنے والے ہیں

تفسیر کمالین شرح اردو تفسیر جلالین:

زمین کو ہم نے بچھایا ہے اور ہم بڑے اچھے ہموار کرنے والے ہیں

ابوالاعلی مودودی Abul A'ala Maududi

زمین کو ہم نے بچھایا ہے اور ہم بڑے اچھے ہموار کرنے والے ہیں

احمد رضا خان Ahmed Raza Khan

اور زمین کو ہم نے فرش کیا تو ہم کیا ہی اچھے بچھالے والے،

احمد علی Ahmed Ali

اورہم نے ہی زمین کو بچھایا پھر ہم کیا خوب بچھانے والے ہیں

أحسن البيان Ahsanul Bayan

اور زمین کو ہم نے فرش بنا دیا (١) پس ہم بہت ہی اچھے بچھانے والے ہیں۔

٤٨۔١ یعنی فرش کی طرح اسے بچھا دیا ہے۔

جالندہری Fateh Muhammad Jalandhry

اور زمین کو ہم ہی نے بچھایا تو (دیکھو) ہم کیا خوب بچھانے والے ہیں

محمد جوناگڑھی Muhammad Junagarhi

اور زمین کو ہم نے فرش بنا دیاہے پس ہم بہت ہی اچھے بچھانے والے ہیں

محمد حسین نجفی Muhammad Hussain Najafi

اور ہم نے زمین کافرش بچھایا تو ہم کتنے اچھے فرش بچھانے والے ہیں۔

علامہ جوادی Syed Zeeshan Haitemer Jawadi

اور زمین کو ہم نے فرش کیا ہے تو ہم بہترین ہموار کرنے والے ہیں

طاہر القادری Tahir ul Qadri

اور (سطحِ) زمین کو ہم ہی نے (قابلِ رہائش) فرش بنایا سو ہم کیا خوب سنوارنے اور سیدھا کرنے والے ہیں،