Skip to main content
bismillah
الٓرۚ
الۗرٰ
تِلْكَ
یہ
ءَايَٰتُ
آیات ہیں
ٱلْكِتَٰبِ
کتاب
ٱلْحَكِيمِ
حکیم کی (حکمت والی کتاب کی)

ا ل ر، یہ اُس کتاب کی آیات ہیں جو حکمت و دانش سے لبریز ہے

تفسير
أَكَانَ
کیا ہے
لِلنَّاسِ
لوگوں کے لیے
عَجَبًا
عجیب بات
أَنْ
کہ
أَوْحَيْنَآ
وحی کی ہم نے
إِلَىٰ
طرف
رَجُلٍ
ایک شخص کے
مِّنْهُمْ
ان میں سے
أَنْ
کہ
أَنذِرِ
خبردار کرو
ٱلنَّاسَ
لوگوں کو
وَبَشِّرِ
اور بشارت دو
ٱلَّذِينَ
ان لوگوں کو
ءَامَنُوٓا۟
جو ایمان لائے
أَنَّ
کہ
لَهُمْ
بیشک ان کے لیے
قَدَمَ
مرتبہ ہے
صِدْقٍ
سچائی کا
عِندَ
پاس
رَبِّهِمْۗ
ان کے رب کے
قَالَ
کہا
ٱلْكَٰفِرُونَ
کافروں نے
إِنَّ
بیشک
هَٰذَا
یہ
لَسَٰحِرٌ
البتہ جادوگر ہے
مُّبِينٌ
کھلا

کیا لوگوں کے لیے یہ ایک عجیب بات ہو گئی کہ ہم نے خود اُنہی میں سے ایک آدمی کو اشارہ کیا کہ (غفلت میں پڑے ہوئے) لوگوں کو چونکا دے اور جو مان لیں ان کو خوشخبری دیدے کہ ان کے لیے اُن کے رب کے پاس سچی عزت و سرفرازی ہے؟ (کیا یہی وہ بات ہے جس پر) منکرین نے کہا کہ یہ شخص تو کھلا جادوگر ہے؟

تفسير
إِنَّ
بیشک
رَبَّكُمُ
رب تمہارا
ٱللَّهُ
اللہ ہے
ٱلَّذِى
جس نے
خَلَقَ
پیدا کیا
ٱلسَّمَٰوَٰتِ
آسمانوں کو
وَٱلْأَرْضَ
اور زمین کو
فِى
میں
سِتَّةِ
چھ
أَيَّامٍ
دنوں
ثُمَّ
پھر
ٱسْتَوَىٰ
وہ مستوی ہوا
عَلَى
پر
ٱلْعَرْشِۖ
عرش
يُدَبِّرُ
تدبیر کرتا ہے
ٱلْأَمْرَۖ
تمام معاملات کی
مَا
نہیں
مِن
کوئی
شَفِيعٍ
سفارشی
إِلَّا
مگر
مِنۢ
بَعْدِ
بعد اس کے
إِذْنِهِۦۚ
اذن کے
ذَٰلِكُمُ
یہ ہے
ٱللَّهُ
اللہ
رَبُّكُمْ
رب تمہارا
فَٱعْبُدُوهُۚ
پس عبادت کرو اس کی
أَفَلَا
کیا بھلا نہیں
تَذَكَّرُونَ
تم نصیحت پکڑتے

حقیقت یہ ہے کہ تمہارا رب وہی خدا ہے جس نے آسمانوں اور زمین کو چھ دنوں میں پیدا کیا، پھر تخت حکومت پر جلوہ گر ہوا اور کائنات کا انتظام چلا رہا ہے کوئی شفاعت (سفارش) کرنے والا نہیں اِلّا یہ کہ اس کی اجازت کے بعد شفاعت کرے یہی اللہ تمہارا رب ہے لہٰذا تم اُسی کی عبادت کرو پھر کیا تم ہوش میں نہ آؤ گے؟

تفسير
إِلَيْهِ
اس کی طرف
مَرْجِعُكُمْ
لوٹنا ہے تمہارا
جَمِيعًاۖ
سب کا
وَعْدَ
وعدہ ہے
ٱللَّهِ
اللہ کا
حَقًّاۚ
سچا
إِنَّهُۥ
بیشک وہ
يَبْدَؤُا۟
ابتدا کرتا ہے
ٱلْخَلْقَ
پیدائش کی
ثُمَّ
پھر
يُعِيدُهُۥ
دوبارہ لوٹائے گا اس کو
لِيَجْزِىَ
تاکہ بدلہ دے
ٱلَّذِينَ
ان لوگوں کو
ءَامَنُوا۟
جو ایمان لائے
وَعَمِلُوا۟
اور انہوں نے عمل کیے
ٱلصَّٰلِحَٰتِ
اچھے
بِٱلْقِسْطِۚ
ساتھ انصاف کے
وَٱلَّذِينَ
اور وہ لوگ
كَفَرُوا۟
جنہوں نے کفر کیا
لَهُمْ
ان کے لیے
شَرَابٌ
پینا ہے
مِّنْ
کا
حَمِيمٍ
کھولتے ہوئے پانی
وَعَذَابٌ
اور عذاب ہے
أَلِيمٌۢ
دردناک
بِمَا
بوجہ اس کے
كَانُوا۟
جو تھے وہ
يَكْفُرُونَ
کفر کرتے

اسی کی طرف تم سب کو پلٹ کر جانا ہے، یہ اللہ کا پکا وعدہ ہے بے شک پیدائش کی ابتدا وہی کرتا ہے، پھر وہی دوبارہ پیدا کرے گا، تاکہ جو لوگ ایمان لائے اور جنہوں نے نیک عمل کیے ان کو پورے انصاف کے ساتھ جزا دے، اور جنہوں نے کفر کا طریقہ اختیار کیا وہ کھولتا ہوا پانی پییں اور دردناک سزا بھگتیں اُس انکار حق کی پاداش میں جو وہ کرتے رہے

تفسير
هُوَ
وہ اللہ
ٱلَّذِى
وہ ذات ہے
جَعَلَ
جس نے بنایا
ٱلشَّمْسَ
سورج کو
ضِيَآءً
روشن
وَٱلْقَمَرَ
اور چاند کو
نُورًا
چمکنے والا
وَقَدَّرَهُۥ
اور مقدر کیں اس کی
مَنَازِلَ
منزلیں
لِتَعْلَمُوا۟
تاکہ تم جان لو
عَدَدَ
گنتی
ٱلسِّنِينَ
سالوں کی
وَٱلْحِسَابَۚ
اور حساب
مَا
نہیں
خَلَقَ
پیدا کیا
ٱللَّهُ
اللہ نے
ذَٰلِكَ
اس کو
إِلَّا
مگر
بِٱلْحَقِّۚ
حق کے ساتھ
يُفَصِّلُ
کھول کھول کر بیان کرتا ہے
ٱلْءَايَٰتِ
آیات کو
لِقَوْمٍ
اس قوم کے لیے
يَعْلَمُونَ
جو علم رکھتی ہو

وہی ہے جس نے سُورج کو اجیالا بنایا اور چاند کو چمک دی اور چاند کے گھٹنے بڑھنے کی منزلیں ٹھیک ٹھیک مقرر کر دیں تاکہ تم اُس سے برسوں اور تاریخوں کے حساب معلوم کرو اللہ نے یہ سب کچھ (کھیل کے طور پر نہیں بلکہ) با مقصد ہی بنایا ہے وہ اپنی نشانیوں کو کھول کھول کر پیش کر رہا ہے اُن لوگوں کے لیے جو علم رکھتے ہیں

تفسير
إِنَّ
بیشک
فِى
میں
ٱخْتِلَٰفِ
اختلاف
ٱلَّيْلِ
رات
وَٱلنَّهَارِ
اور دن کے
وَمَا
اور جو
خَلَقَ
پیدا کیا
ٱللَّهُ
اللہ نے
فِى
میں
ٱلسَّمَٰوَٰتِ
آسمانوں
وَٱلْأَرْضِ
اور زمین میں
لَءَايَٰتٍ
البتہ نشانیاں ہیں
لِّقَوْمٍ
ان لوگوں کے لیے
يَتَّقُونَ
جو بچنا چاہتے ہیں

یقیناً رات اور دن کے الٹ پھیر میں اور ہر اُس چیز میں جو اللہ نے زمین اور آسمانوں میں پیدا کی ہے، نشانیاں ہیں اُن لوگوں کے لیے جو (غلط بینی و غلط روی سے) بچنا چاہتے ہیں

تفسير
إِنَّ
بیشک
ٱلَّذِينَ
وہ لوگ
لَا
جو نہیں رکھتے
يَرْجُونَ
امید
لِقَآءَنَا
ہماری ملاقات کی
وَرَضُوا۟
اور وہ راضی ہوگئے
بِٱلْحَيَوٰةِ
زندگی پر
ٱلدُّنْيَا
دنیا کی
وَٱطْمَأَنُّوا۟
اور مطمئن ہوگئے
بِهَا
اس پر
وَٱلَّذِينَ
اور وہ لوگ
هُمْ
وہ
عَنْ
ءَايَٰتِنَا
ہماری آیات سے
غَٰفِلُونَ
غافل ہیں

حقیقت یہ ہے کہ جو لوگ ہم سے ملنے کی توقع نہیں رکھتے اور دنیا کی زندگی ہی پر راضی اور مطمئن ہو گئے ہیں، اور جو لوگ ہماری نشانیوں سے غافل ہیں

تفسير
أُو۟لَٰٓئِكَ
یہی لوگ
مَأْوَىٰهُمُ
ٹھکانہ ان کا
ٱلنَّارُ
آگ ہے
بِمَا
بوجہ ان کے
كَانُوا۟
جو تھے وہ
يَكْسِبُونَ
کمائی کرتے

اُن کا آخری ٹھکانہ جہنم ہو گا اُن برائیوں کی پاداش میں جن کا اکتساب وہ (اپنے اس غلط عقیدے اور غلط طرز عمل کی وجہ سے) کرتے رہے

تفسير
إِنَّ
بیشک
ٱلَّذِينَ
وہ لوگ جو
ءَامَنُوا۟
ایمان لائے
وَعَمِلُوا۟
اور انہوں نے
ٱلصَّٰلِحَٰتِ
اچھے عمل کیے
يَهْدِيهِمْ
ان کی راہنمائی کرے گا
رَبُّهُم
ان کا رب
بِإِيمَٰنِهِمْۖ
بوجہ ان کے ایمان کے
تَجْرِى
بہتی ہیں
مِن
سے
تَحْتِهِمُ
ان کے نیچے
ٱلْأَنْهَٰرُ
نہریں
فِى
میں
جَنَّٰتِ
جنتوں
ٱلنَّعِيمِ
نعمتوں بھری

اور یہ بھی حقیقت ہے کہ جو لوگ ایمان لائے (یعنی جنہوں نے اُن صداقتوں کو قبول کر لیا جو اس کتاب میں پیش کی گئی ہیں) اور نیک اعمال کرتے رہے انہیں اُن کا رب اُن کے ایمان کی وجہ سے سیدھی راہ چلائے گا، نعمت بھری جنتوں میں ان کے نیچے نہریں بہیں گی

تفسير
دَعْوَىٰهُمْ
پکار ان کی
فِيهَا
اس میں
سُبْحَٰنَكَ
پاک ہے تو
ٱللَّهُمَّ
اے اللہ
وَتَحِيَّتُهُمْ
اور دعائے خیر ان کی
فِيهَا
اس میں ہوگی
سَلَٰمٌۚ
سلام
وَءَاخِرُ
اور آخری
دَعْوَىٰهُمْ
پکار ان کی
أَنِ
یہ کہ
ٱلْحَمْدُ
سب شکر
لِلَّهِ
اللہ کے لیے ہے
رَبِّ
جو رب ہے
ٱلْعَٰلَمِينَ
تمام جہانوں کا

وہاں ان کی صدا یہ ہوگی کہ “پاک ہے تو اے خدا، " اُن کی دعا یہ ہوگی کہ “سلامتی ہو " اور ان کی ہر بات کا خاتمہ اس پر ہوگا کہ “ساری تعریف اللہ رب العالمین ہی کے لیے ہے "

تفسير
کے بارے میں معلومات :
یونس
القرآن الكريم:يونس
آية سجدہ (سجدة):-
سورۃ کا نام (latin):Yunus
سورہ نمبر:10
کل آیات:109
کل کلمات:1832
کل حروف:9990
کل رکوعات:11
مقام نزول:مکہ مکرمہ
ترتیب نزولی:51
آیت سے شروع:1364