Skip to main content
ARBNDEENIDTRUR
bismillah

حٰمٓ ۚ

حٰـمۗ
حم

ح م

تفسير

تَنْزِيْلُ الْكِتٰبِ مِنَ اللّٰهِ الْعَزِيْزِ الْحَكِيْمِ

تَنْزِيْلُ الْكِتٰبِ
نازل کرنا ہے کتاب کا
مِنَ اللّٰهِ
اللہ کی طرف سے
الْعَزِيْزِ الْحَكِيْمِ
جو زبردست ہے، حکمت والا ہے

اِس کتاب کا نزول اللہ زبردست اور دانا کی طرف سے ہے

تفسير

مَا خَلَقْنَا السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضَ وَمَا بَيْنَهُمَاۤ اِلَّا بِالْحَقِّ وَاَجَلٍ مُّسَمًّىۗ وَالَّذِيْنَ كَفَرُوْا عَمَّاۤ اُنْذِرُوْا مُعْرِضُوْنَ

مَا خَلَقْنَا
نہیں پیدا کیا ہم نے
السَّمٰوٰتِ
آسمانوں کو
وَالْاَرْضَ
اور زمین کو
وَمَا بَيْنَهُمَآ
اور جو ان دونوں کے درمیان ہے
اِلَّا
مگر
بِالْحَـقِّ
حق کے ساتھ
وَاَجَلٍ مُّسَمًّى ۭ
اور مقرر مدت تک کے لیے
وَالَّذِيْنَ كَفَرُوْا
اور وہ لوگ جنہوں نے کفر کیا
عَمَّآ
اس چیز سے جو
اُنْذِرُوْا
وہ خبر دار کیے گئے
مُعْرِضُوْنَ
اعراض برتنے والے ہیں

ہم نے زمین اور آسمانوں کو اور اُن ساری چیزوں کو جو اُن کے درمیان ہیں برحق، اور ایک مدت خاص کے تعین کے ساتھ پیدا کیا ہے مگر یہ کافر لوگ اُس حقیقت سے منہ موڑے ہوئے ہیں جس سے ان کو خبردار کیا گیا ہے

تفسير

قُلْ اَرَءَيْتُمْ مَّا تَدْعُوْنَ مِنْ دُوْنِ اللّٰهِ اَرُوْنِىْ مَاذَا خَلَقُوْا مِنَ الْاَرْضِ اَمْ لَهُمْ شِرْكٌ فِى السَّمٰوٰتِ ۖ ائْتُوْنِىْ بِكِتٰبٍ مِّنْ قَبْلِ هٰذَاۤ اَوْ اَثٰرَةٍ مِّنْ عِلْمٍ اِنْ كُنْتُمْ صٰدِقِيْنَ

قُلْ
کہہ دیجیے
اَرَءَيْتُمْ
کیا دیکھا تم نے۔ غور کیا تم نے
مَّا تَدْعُوْنَ
جن کو تم پکارتے ہو
مِنْ دُوْنِ اللّٰهِ
اللہ کے سوا
اَرُوْنِيْ
دکھاؤ مجھ کو
مَاذَا خَلَقُوْا
کیا کچھ انہوں نے پیدا کیا ہے
مِنَ الْاَرْضِ
زمین سے
اَمْ لَــهُمْ
یا ان کے لیے
شِرْكٌ
کوئی حصہ ہے
فِي السَّمٰوٰتِ ۭ
آسمانوں میں
اِيْتُوْنِيْ
لاؤ میرے پاس
بِكِتٰبٍ
کوئی کتاب
مِّنْ
سے
قَبْلِ
پہلے
ھٰذَآ
اس (سے)
اَوْ اَثٰرَةٍ
یا باقی ماندہ
مِّنْ عِلْمٍ
علم میں سے
اِنْ كُنْتُمْ صٰدِقِيْنَ
اگر ہو تم سچے

اے نبیؐ، اِن سے کہو، "کبھی تم نے آنکھیں کھول کر دیکھا بھی کہ وہ ہستیاں ہیں کیا جنہیں تم خدا کو چھوڑ کر پکارتے ہو؟ ذرا مجھے دکھاؤ تو سہی کہ زمین میں انہوں نے کیا پیدا کیا ہے، یا آسمانوں کی تخلیق و تدبیر میں ان کا کیا حصہ ہے اِس سے پہلے آئی ہوئی کتاب یا علم کا کوئی بقیہ (اِن عقائد کے ثبوت میں) تمہارے پاس ہو تو وہی لے آؤ اگر تم سچے ہو"

تفسير

وَمَنْ اَضَلُّ مِمَّنْ يَّدْعُوْا مِنْ دُوْنِ اللّٰهِ مَنْ لَّا يَسْتَجِيْبُ لَهٗۤ اِلٰى يَوْمِ الْقِيٰمَةِ وَهُمْ عَنْ دُعَاۤٮِٕهِمْ غٰفِلُوْنَ

وَمَنْ اَضَلُّ
اور کون زیادہ بھٹکا ہوا ہوسکتا ہے
مِمَّنْ يَّدْعُوْا
اس سے جو پکارتا ہے
مِنْ دُوْنِ اللّٰهِ
اللہ کے سوا
مَنْ
(اسے) جو
لَّا يَسْتَجِيْبُ
نہیں جواب دے سکتے
لَهٗٓ
اس کے لیے
اِلٰى يَوْمِ الْقِيٰمَةِ
قیامت کے دن تک
وَهُمْ
اور وہ
عَنْ دُعَاۗىِٕهِمْ
ان کی پکار سے
غٰفِلُوْنَ
غافل ہیں

آخر اُس شخص سے زیادہ بہکا ہوا انسان اور کون ہو گا جو اللہ کو چھوڑ کر اُن کو پکارے جو قیامت تک اسے جواب نہیں دے سکتے بلکہ اِس سے بھی بے خبر ہیں کہ پکارنے والے اُن کو پکار رہے ہیں

تفسير

وَاِذَا حُشِرَ النَّاسُ كَانُوْا لَهُمْ اَعْدَاۤءً وَّ كَانُوْا بِعِبَادَتِهِمْ كٰفِرِيْنَ

وَاِذَا حُشِرَ النَّاسُ
اور جب جمع کیے جائیں گے لوگ
كَانُوْا
وہ ہوں گے
لَهُمْ
ان کے لیے
اَعْدَاۗءً
دشمن
وَّكَانُوْا
اور وہ ہوں گے
بِعِبَادَتِهِمْ
ان کی عبادت کے
كٰفِرِيْنَ
منکر

اور جب تمام انسان جمع کیے جائیں گے اُس وقت وہ اپنے پکارنے والوں کے دشمن اور ان کی عبادت کے منکر ہوں گے

تفسير

وَاِذَا تُتْلٰى عَلَيْهِمْ اٰيٰتُنَا بَيِّنٰتٍ قَالَ الَّذِيْنَ كَفَرُوْا لِلْحَقِّ لَـمَّا جَاۤءَهُمْۙ هٰذَا سِحْرٌ مُّبِيْنٌۗ

وَاِذَا
اور جب
تُتْلٰى
پڑھی جاتی ہیں
عَلَيْهِمْ
ان پر
اٰيٰتُنَا بَيِّنٰتٍ
ہماری روشن نشانیاں۔ آیات
قَالَ الَّذِيْنَ
کہا ان لوگوں نے
كَفَرُوْا
جنہوں نے کفر کیا
لِلْحَقِّ
حق کے لیے
لَمَّا جَاۗءَهُمْ ۙ
جب وہ آگیا ان کے پاس
ھٰذَا
یہ ہے
سِحْرٌ مُّبِيْنٌ
جادو کھلا

اِن لوگوں کو جب ہماری صاف صاف آیات سنائی جاتی ہیں اور حق اِن کے سامنے آ جاتا ہے تو یہ کافر لوگ اُس کے متعلق کہتے ہیں کہ یہ تو کھلا جادو ہے

تفسير

اَمْ يَقُوْلُوْنَ افْتَـرٰٮهُۗ قُلْ اِنِ افْتَـرَيْتُهٗ فَلَا تَمْلِكُوْنَ لِىْ مِنَ اللّٰهِ شَيـــًٔا ۗ هُوَ اَعْلَمُ بِمَا تُفِيْضُوْنَ فِيْهِۗ كَفٰى بِهٖ شَهِيْدًاۢ بَيْنِىْ وَبَيْنَكُمْ ۗ وَهُوَ الْغَفُوْرُ الرَّحِيْمُ

اَمْ يَقُوْلُوْنَ
یا وہ کہتے ہیں
افْتَرٰىهُ ۭ
کہ اس نے گھڑ لیا ہے اس کو
قُلْ
کہہ دیجیے
اِنِ افْتَرَيْتُهٗ
اگر میں نے گھڑ لیا ہے اس کو
فَلَا تَمْلِكُوْنَ لِيْ
تو نہیں تم مالک ہوسکتے میرے لیے
مِنَ
سے
اللّٰهِ شَيْـــــًٔا ۭ
اللہ کے مقابلے میں کسی چیز کے
هُوَ اَعْلَمُ
وہ خوب جانتا ہے
بِمَا تُفِيْضُوْنَ
ساتھ اس کے جو تم پڑحتے ہو۔ تم شروع کرتے ہو۔ تم گھستے ہو۔ تم پلٹتے ہو
فِيْهِ ۭ
اس میں
كَفٰى
کافی
بِهٖ
ساتھ اس کے
شَهِيْدًۢا
گواہ ہونا
بَيْنِيْ
میرے درمیان
وَبَيْنَكُمْ ۭ
اور تمہارے درمیان
وَهُوَ الْغَفُوْرُ الرَّحِيْمُ
اور وہ غفور رحیم ہے

کیا اُن کا کہنا یہ ہے کہ رسول نے اِسے خود گھڑ لیا ہے؟ ان سے کہو، "اگر میں نے اِسے خود گھڑ لیا ہے تو تم مجھے خدا کی پکڑ سے کچھ بھی نہ بچا سکو گے، جو باتیں تم بناتے ہو اللہ ان کو خوب جانتا ہے، میرے اور تمہارے درمیان وہی گواہی دینے کے لیے کافی ہے، اور وہ بڑا درگزر کرنے والا اور رحیم ہے"

تفسير

قُلْ مَا كُنْتُ بِدْعًا مِّنَ الرُّسُلِ وَمَاۤ اَدْرِىْ مَا يُفْعَلُ بِىْ وَلَا بِكُمْۗ اِنْ اَتَّبِعُ اِلَّا مَا يُوْحٰۤى اِلَىَّ وَمَاۤ اَنَاۡ اِلَّا نَذِيْرٌ مُّبِيْنٌ

قُلْ
کہہ دیجیے
مَا كُنْتُ
نہیں ہوں میں
بِدْعًا
نیا۔ انوکھا
مِّنَ الرُّسُلِ
رسولوں میں سے
وَمَآ اَدْرِيْ
اور نہیں میں جانتا
مَا
کیا
يُفْعَلُ بِيْ
کیا جائے گا میرے ساتھ
وَلَا بِكُمْ ۭ
اور نہ تمہارے ساتھ
اِنْ اَتَّبِــعُ
نہیں میں پیروی کرتا
اِلَّا
مگر
مَا يُوْحٰٓى
اس کی جو وحی کی جاتی ہے
اِلَيَّ
میری طرف
وَمَآ اَنَا
اور نہیں میں
اِلَّا نَذِيْرٌ مُّبِيْنٌ
مگر خبردار کرنے والا کھلم کھلا

اِن سے کہو، "میں کوئی نرالا رسول تو نہیں ہوں، میں نہیں جانتا کہ کل تمہارے ساتھ کیا ہونا ہے اور میرے ساتھ کیا، میں تو صرف اُس وحی کی پیروی کرتا ہوں جو میرے پاس بھیجی جاتی ہے اور میں ایک صاف صاف خبردار کر دینے والے کے سوا اور کچھ نہیں ہوں"

تفسير

قُلْ اَرَءَيْتُمْ اِنْ كَانَ مِنْ عِنْدِ اللّٰهِ وَكَفَرْتُمْ بِهٖ وَشَهِدَ شَاهِدٌ مِّنْۢ بَنِىْۤ اِسْرَاۤءِيْلَ عَلٰى مِثْلِهٖ فَاٰمَنَ وَاسْتَكْبَرْتُمْ ۗ اِنَّ اللّٰهَ لَا يَهْدِى الْقَوْمَ الظّٰلِمِيْنَ

قُلْ اَرَءَيْتُمْ
کہہ دیجیے کیا سوچا تم نے
اِنْ
اگر
كَانَ
ہے وہ
مِنْ عِنْدِ اللّٰهِ
اللہ کی طرف سے
وَكَفَرْتُمْ بِهٖ
اور کفر کیا تم نے ساتھ اس کے
وَشَهِدَ
اور گواہی دے چکا
شَاهِدٌ
ایک گواہ
مِّنْۢ بَنِيْٓ اِسْرَاۗءِيْلَ
بنی اسرائیل میں سے
عَلٰي مِثْلِهٖ
اوپر اس کی مانند کے
فَاٰمَنَ
پس وہ ایمان لے آیا
وَاسْـتَكْبَرْتُمْ ۭ
اور تم نے تکبر کیا
اِنَّ اللّٰهَ
بیشک اللہ تعالیٰ
لَا يَهْدِي
نہیں ہدایت دیتا
الْــقَوْمَ الظّٰلِمِيْنَ
ظالم قوم کو

اے نبیؐ، ان سے کہو "کبھی تم نے سوچا بھی کہ اگر یہ کلام اللہ ہی کی طرف سے ہوا اور تم نے اِس کا انکار کر دیا (تو تمہارا کیا انجام ہوگا)؟ اور اِس جیسے ایک کلام پر تو بنی اسرائیل کا ایک گواہ شہادت بھی دے چکا ہے وہ ایمان لے آیا اور تم اپنے گھمنڈ میں پڑے رہے ایسے ظالموں کو اللہ ہدایت نہیں دیا کرتا"

تفسير
کے بارے میں معلومات :
الاحقاف
القرآن الكريم:الأحقاف
آية سجدہ (سجدة):-
سورۃ کا نام (latin):Al-Ahqaf
سورہ نمبر:46
کل آیات:35
کل کلمات:44
کل حروف:2595
کل رکوعات:4
مقام نزول:مکہ مکرمہ
ترتیب نزولی:66
آیت سے شروع:4510