Skip to main content
ARBNDEENIDTRUR
bismillah

اِذَا جَاۤءَكَ الْمُنٰفِقُوْنَ قَالُوْا نَشْهَدُ اِنَّكَ لَرَسُوْلُ اللّٰهِ ۘ وَاللّٰهُ يَعْلَمُ اِنَّكَ لَرَسُوْلُهٗ ۗ وَاللّٰهُ يَشْهَدُ اِنَّ الْمُنٰفِقِيْنَ لَـكٰذِبُوْنَ ۚ

اِذَا جَاۗءَكَ
جب آتے ہیں تیرے پاس
الْمُنٰفِقُوْنَ
منافق
قَالُوْا نَشْهَدُ
کہتے ہیں ہم گواہی دیتے ہو
اِنَّكَ لَرَسُوْلُ اللّٰهِ
بیشک آپ البتہ اللہ کے رسول ہیں
وَاللّٰهُ
اور اللہ
يَعْلَمُ
جانتا ہے
اِنَّكَ لَرَسُوْلُهٗ
بیشک آپ البتہ اس کے رسول ہیں
وَاللّٰهُ يَشْهَدُ
اور اللہ گواہی دیتا ہے
اِنَّ
بیشک
الْمُنٰفِقِيْنَ
منافق
لَكٰذِبُوْنَ
البتہ جھوٹے ہیں

اے نبیؐ، جب یہ منافق تمہارے پاس آتے ہیں تو کہتے ہیں "ہم گواہی دیتے ہیں کہ آ پ یقیناً اللہ کے رسول ہیں" ہاں، اللہ جانتا ہے کہ تم ضرور اُس کے رسول ہو، مگر اللہ گواہی دیتا ہے کہ یہ منافق قطعی جھوٹے ہیں

تفسير

اِتَّخَذُوْۤا اَيْمَانَهُمْ جُنَّةً فَصَدُّوْا عَنْ سَبِيْلِ اللّٰهِۗ اِنَّهُمْ سَاۤءَ مَا كَانُوْا يَعْمَلُوْنَ

اِتَّخَذُوْٓا
انہوں نے بنا لیا
اَيْمَانَهُمْ
اپنی قسموں کو
جُنَّةً
ڈھال
فَصَدُّوْا
تو انہوں نے روکا
عَنْ سَبِيْلِ اللّٰهِ
اللہ کے راستے سے
اِنَّهُمْ
بیشک وہ
سَاۗءَ
کتنا برا ہے
مَا كَانُوْا
جو کچھ وہ ہیں
يَعْمَلُوْنَ
وہ کررہے

انہوں نے اپنی قسموں کو ڈھال بنا رکھا ہے اور اِس طرح یہ اللہ کے راستے سے خود رکتے اور دنیا کو روکتے ہیں کیسی بری حرکتیں ہیں جو یہ لوگ کر رہے ہیں

تفسير

ذٰلِكَ بِاَنَّهُمْ اٰمَنُوْا ثُمَّ كَفَرُوْا فَطُبِعَ عَلٰى قُلُوْبِهِمْ فَهُمْ لَا يَفْقَهُوْنَ

ذٰلِكَ بِاَنَّهُمْ
یہ بوجہ اس کے کہ بیشک وہ
اٰمَنُوْا
ایمان لائے
ثُمَّ كَفَرُوْا
پھر انہوں نے کفر کیا
فَطُبِعَ
تو مہر لگا دی گئی
عَلٰي
اوپر
قُلُوْبِهِمْ
ان کے دلوں کے
فَهُمْ
پس وہ
لَا يَفْقَهُوْنَ
سمجھتے نہیں ہیں

یہ سب کچھ اس وجہ سے ہے کہ ان لوگوں نے ایمان لا کر پھر کفر کیا اس لیے ان کے دلوں پر مہر لگا دی گئی، اب یہ کچھ نہیں سمجھتے

تفسير

وَاِذَا رَاَيْتَهُمْ تُعْجِبُكَ اَجْسَامُهُمْ ۗ وَاِنْ يَّقُوْلُوْا تَسْمَعْ لِقَوْلِهِمْ ۗ كَاَنَّهُمْ خُشُبٌ مُّسَنَّدَةٌ ۗ يَحْسَبُوْنَ كُلَّ صَيْحَةٍ عَلَيْهِمْ ۗ هُمُ الْعَدُوُّ فَاحْذَرْهُمْ ۗ قَاتَلَهُمُ اللّٰهُۖ اَنّٰى يُـؤْفَكُوْنَ

وَاِذَا
پھر جب
رَاَيْتَهُمْ
تم دیکھو ان کو
تُعْجِبُكَ
اچھے لگیں گے تم کو
اَجْسَامُهُمْ
ان کے جسم
وَاِنْ يَّقُوْلُوْا
اور اگر وہ بات کریں
تَسْمَعْ لِقَوْلِهِمْ
تم سنتے جاؤ ان کی بات کو
كَاَنَّهُمْ
گویا کہ وہ
خُشُبٌ
لکڑیاں ہیں
مُّسَنَّدَةٌ
تختہ لگائی ہوئیں
يَحْسَبُوْنَ
وہ سمجھتے ہیں
كُلَّ صَيْحَةٍ
ہر سخت آواز کو
عَلَيْهِمْ
اپنے اوپر
هُمُ
وہ
الْعَدُوُّ
دشمن ہیں
فَاحْذَرْهُمْ
پس ڈرو ان سے۔ بچو ان سے
قٰتَلَهُمُ اللّٰهُ
غارت کرے ان کو اللہ
اَنّٰى يُؤْفَكُوْنَ
کہاں سے وہ پھرے جاتے ہیں

اِنہیں دیکھو تو اِن کے جثے تمہیں بڑے شاندار نظر آئیں بولیں تو تم ان کی باتیں سنتے رہ جاؤ مگر اصل میں یہ گویا لکڑی کے کندے ہیں جو دیوار کے ساتھ چن کر رکھ دیے گئے ہوں ہر زور کی آواز کو یہ اپنے خلاف سمجھتے ہیں یہ پکے دشمن ہیں، ان سے بچ کر رہو، اللہ کی مار ان پر، یہ کدھر الٹے پھرائے جا رہے ہیں

تفسير

وَاِذَا قِيْلَ لَهُمْ تَعَالَوْا يَسْتَغْفِرْ لَـكُمْ رَسُوْلُ اللّٰهِ لَـوَّوْا رُءُوْسَهُمْ وَرَاَيْتَهُمْ يَصُدُّوْنَ وَهُمْ مُّسْتَكْبِرُوْنَ

وَ
اور
اِذَا قِيْلَ لَهُمْ
آؤ
تَعَالَوْا
بخشش مانگتے ہیں تمہارے لیے
يَسْتَغْفِرْ لَكُمْ
اللہ کے رسول
رَسُوْلُ اللّٰهِ
موڑتے ہیں
لَوَّوْا
اپنے سروں کو
رُءُوْسَهُمْ
اور تم دیکھتے ہو ان کو
وَرَاَيْتَهُمْ
وہ باز رہتے ہیں
يَصُدُّوْنَ
اور وہ تکبر کرنے والے ہیں
وَهُمْ مُّسْـتَكْبِرُوْنَ
اور وہ تکبر کرنے والے ہیں

اور جب اِن سے کہا جاتا ہے کہ آؤ تاکہ اللہ کا رسول تمہارے لیے مغفرت کی دعا کرے، تو سر جھٹکتے ہیں اور تم دیکھتے ہو کہ وہ بڑے گھمنڈ کے ساتھ آنے سے رکتے ہیں

تفسير

سَوَاۤءٌ عَلَيْهِمْ اَسْتَغْفَرْتَ لَهُمْ اَمْ لَمْ تَسْتَغْفِرْ لَهُمْۗ لَنْ يَّغْفِرَ اللّٰهُ لَهُمْۗ اِنَّ اللّٰهَ لَا يَهْدِى الْقَوْمَ الْفٰسِقِيْنَ

سَوَاۗءٌ عَلَيْهِمْ
برابر ہے ان پر
اَسْتَغْفَرْتَ لَهُمْ
خواہ تم بخشش مانگو ان کے لیے
اَمْ لَمْ تَسْتَغْفِرْ
یا نہ تم بخشش مانگو
لَهُمْ
ان کے لیے
لَنْ
ہرگز نہ
يَّغْفِرَ اللّٰهُ لَهُمْ
معاف کرے گا اللہ ان کو
اِنَّ اللّٰهَ
کیونکہ اللہ تعالیٰ
لَا يَهْدِي
نہیں ہدایت دیتا
الْقَوْمَ الْفٰسِقِيْنَ
فاسق قوم کو

اے نبیؐ، تم چاہے ان کے لیے مغفرت کی دعا کرو یا نہ کرو، ان کے لیے یکساں ہے، اللہ ہرگز انہیں معاف نہ کرے گا، اللہ فاسق لوگوں کو ہرگز ہدایت نہیں دیتا

تفسير

هُمُ الَّذِيْنَ يَقُوْلُوْنَ لَا تُنْفِقُوْا عَلٰى مَنْ عِنْدَ رَسُوْلِ اللّٰهِ حَتّٰى يَنْفَضُّوْاۗ وَلِلّٰهِ خَزَاۤٮِٕنُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ وَلٰـكِنَّ الْمُنٰفِقِيْنَ لَا يَفْقَهُوْنَ

هُمُ الَّذِيْنَ
وہ لوگ ہیں
يَقُوْلُوْنَ
جو کہتے ہیں
لَا تُنْفِقُوْا
نہ تم خرچ کرو
عَلٰي
اوپر
مَنْ عِنْدَ
اس کے جو پاس ہیں
رَسُوْلِ اللّٰهِ
اللہ کے رسول کے
حَتّٰى يَنْفَضُّوْا
یہاں تک کہ وہ بھاگ جائیں
وَلِلّٰهِ
اور اللہ کے لیے ہیں
خَزَاۗىِٕنُ
خزانے
السَّمٰوٰتِ
آسمانوں کے
وَالْاَرْضِ
اور زمین کے
وَلٰكِنَّ الْمُنٰفِقِيْنَ
لیکن منافق لوگ
لَا
نہیں
يَفْقَهُوْنَ
سمجھتے

یہ وہی لوگ ہیں جو کہتے ہیں کہ رسول کے ساتھیوں پر خرچ کرنا بند کر دو تاکہ یہ منتشر ہو جائیں حالانکہ زمین اور آسمانوں کے خزانوں کا مالک اللہ ہی ہے، مگر یہ منافق سمجھتے نہیں ہیں

تفسير

يَقُوْلُوْنَ لَٮِٕنْ رَّجَعْنَاۤ اِلَى الْمَدِيْنَةِ لَيُخْرِجَنَّ الْاَعَزُّ مِنْهَا الْاَذَلَّ  ۗ وَلِلّٰهِ الْعِزَّةُ وَلِرَسُوْلِهٖ وَلِلْمُؤْمِنِيْنَ وَلٰـكِنَّ الْمُنٰفِقِيْنَ لَا يَعْلَمُوْنَ

يَقُوْلُوْنَ
وہ کہتے ہیں
لَىِٕنْ رَّجَعْنَآ
البتہ اگر لوٹے ہم
اِلَى الْمَدِيْنَةِ
مدینہ کی طرف
لَيُخْرِجَنَّ
البتہ ضرور نکالے گا
الْاَعَزُّ مِنْهَا
زیادہ عزت والا اس سے
الْاَذَلَّ
زیادہ ذلیل کو
وَلِلّٰهِ الْعِزَّةُ
اور اللہ کے لیے ہے عزت
وَلِرَسُوْلِهٖ
اور اس کے رسول کے لیے
وَلِلْمُؤْمِنِيْنَ
اور مومنوں کے لیے
وَلٰكِنَّ الْمُنٰفِقِيْنَ
لیکن منافق لوگ
لَا يَعْلَمُوْنَ
علم نہیں رکھتے

یہ کہتے ہیں کہ ہم مدینے واپس پہنچ جائیں تو جو عزت والا ہے وہ ذلیل کو وہاں سے نکال باہر کرے گا حالانکہ عزت تو اللہ اور اس کے رسولؐ اور مومنین کے لیے ہے، مگر یہ منافق جانتے نہیں ہیں

تفسير

يٰۤاَيُّهَا الَّذِيْنَ اٰمَنُوْا لَا تُلْهِكُمْ اَمْوَالُكُمْ وَلَاۤ اَوْلَادُكُمْ عَنْ ذِكْرِ اللّٰهِۚ وَمَنْ يَّفْعَلْ ذٰلِكَ فَاُولٰۤٮِٕكَ هُمُ الْخٰسِرُوْنَ

يٰٓاَيُّهَا
اے
الَّذِيْنَ اٰمَنُوْا
لوگو ! جو ایمان لائے ہو
لَا تُلْهِكُمْ
نہ غافل کریں تم کو
اَمْوَالُكُمْ
مال تمہارے
وَلَآ اَوْلَادُكُمْ
اور نہ اولاد تمہاری
عَنْ ذِكْرِ اللّٰهِ
اللہ کے ذکر سے
وَمَنْ يَّفْعَلْ ذٰلِكَ
اور جو کوئی ایسا کرے گا
فَاُولٰۗىِٕكَ
تو یہی لوگ
هُمُ الْخٰسِرُوْنَ
وہ ہیں جو خسارہ پانے والے ہیں

اے لوگو جو ایمان لائے ہو، تمہارے مال اور تمہاری اولادیں تم کو اللہ کی یاد سے غافل نہ کر دیں جو لوگ ایسا کریں وہی خسارے میں رہنے والے ہیں

تفسير

وَاَنْفِقُوْا مِنْ مَّا رَزَقْنٰكُمْ مِّنْ قَبْلِ اَنْ يَّأْتِىَ اَحَدَكُمُ الْمَوْتُ فَيَقُوْلَ رَبِّ لَوْلَاۤ اَخَّرْتَنِىْۤ اِلٰۤى اَجَلٍ قَرِيْبٍۙ فَاَصَّدَّقَ وَاَكُنْ مِّنَ الصّٰلِحِيْنَ

وَاَنْفِقُوْا
اور خرچ کرو
مِنْ مَّا رَزَقْنٰكُمْ
اس میں سے جو رزق دیا ہم نے تم کو
مِّنْ
سے
قَبْلِ
اس (سے) پہلے
اَنْ يَّاْتِيَ
کہ آجائے
اَحَدَكُمُ الْمَوْتُ
تم میں سے کسی ایک کو موت
فَيَقُوْلَ رَبِّ
تو کہے، اے میرے رب
لَوْلَآ
کیوں نہ
اَخَّرْتَنِيْٓ
تو نے ڈھیل دی مجھ کو
اِلٰٓى اَجَلٍ
ایک وقت تک
قَرِيْبٍ
قریب کے
فَاَصَّدَّقَ
تو میں صدقہ کرتا۔ خیرات دیتا
وَاَكُنْ مِّنَ
اور میں ہوجاتا ، سے
الصّٰلِحِيْنَ
نیکیوں میں (سے)

جو رزق ہم نے تمہیں دیا ہے اس میں سے خرچ کرو قبل اس کے کہ تم میں سے کسی کی موت کا وقت آ جائے اور اُس وقت وہ کہے کہ "اے میرے رب، کیوں نہ تو نے مجھے تھوڑی سی مہلت اور دے دی کہ میں صدقہ دیتا اور صالح لوگوں میں شامل ہو جاتا"

تفسير
کے بارے میں معلومات :
المنافقون
القرآن الكريم:المنافقون
آية سجدہ (سجدة):-
سورۃ کا نام (latin):Al-Munafiqun
سورہ نمبر:63
کل آیات:11
کل کلمات:80
کل حروف:976
کل رکوعات:2
مقام نزول:مدینہ منورہ
ترتیب نزولی:104
آیت سے شروع:5188