Skip to main content
ARBNDEENIDTRUR
bismillah

الٓرٰۗ تِلْكَ اٰيٰتُ الْكِتٰبِ الْمُبِيْنۗ

الۗرٰ
ا ل ر
ۣ تِلْكَ
یہ
اٰيٰتُ
آیات ہیں
الْكِتٰبِ الْمُبِيْنِ
کتاب روشن کی۔ واضح کتاب کی

ا، ل، ر یہ اُس کتاب کی آیات ہیں جو اپنا مدعا صاف صاف بیان کرتی ہے

تفسير

اِنَّاۤ اَنْزَلْنٰهُ قُرْءٰنًا عَرَبِيًّا لَّعَلَّكُمْ تَعْقِلُوْنَ

اِنَّآ
بیشک ہم نے
اَنْزَلْنٰهُ
نازل کیا ہم نے اس کو
قُرْءٰنًا
ایک قرآن
عَرَبِيًّا
عربی
لَّعَلَّكُمْ
تاکہ تم
تَعْقِلُوْنَ
تم سمجھ سکو۔ عقل سے کام لو

ہم نے اسے نازل کیا ہے قرآن بنا کر عربی زبان میں تاکہ تم (اہل عرب) اس کو اچھی طرح سمجھ سکو

تفسير

نَحْنُ نَقُصُّ عَلَيْكَ اَحْسَنَ الْقَصَصِ بِمَاۤ اَوْحَيْنَاۤ اِلَيْكَ هٰذَا الْقُرْاٰنَ ۖ وَاِنْ كُنْتَ مِنْ قَبْلِهٖ لَمِنَ الْغٰفِلِيْنَ

نَحْنُ
ہم
نَقُصُّ
بیان کرتے ہیں
عَلَيْكَ
آپ پر
اَحْسَنَ الْقَصَصِ
بہترین بیان۔ بہترین واقعہ۔ قصوں میں سے بہترین قصہ
بِمَآ اَوْحَيْنَآ
ساتھ اس کے جو وحی کررہے ہیں ہم
اِلَيْكَ
آپ کی طرف
ھٰذَا
اس
الْقُرْاٰنَ
قرآن (نہیں)
ڰ وَاِنْ
اور بیشک
كُنْتَ
تھے آپ
مِنْ قَبْلِهٖ
اس سے پہلے
لَمِنَ الْغٰفِلِيْنَ
البتہ غافلوں میں سے

اے محمدؐ، ہم اس قرآن کو تمہاری طرف وحی کر کے بہترین پیرایہ میں واقعات اور حقائق تم سے بیان کرتے ہیں، ورنہ اس سے پہلے تو (ان چیزو ں سے) تم بالکل ہی بے خبر تھے

تفسير

اِذْ قَالَ يُوْسُفُ لِاَبِيْهِ يٰۤاَبَتِ اِنِّىْ رَاَيْتُ اَحَدَ عَشَرَ كَوْكَبًا وَّالشَّمْسَ وَالْقَمَرَ رَاَيْتُهُمْ لِىْ سٰجِدِيْنَ

اِذْ
جب
قَالَ
کہا تھا
يُوْسُفُ
یوسف نے
لِاَبِيْهِ
اپنے والد سے
يٰٓاَبَتِ
اے میرے ابا جان
اِنِّىْ
بیشک میں نے
رَاَيْتُ
میں دیکھا ہے (خواب)
اَحَدَ عَشَرَ
ایک۔ دس (گیارہ)
كَوْكَبًا
ستاروں کو
وَّالشَّمْسَ
اور سورج
وَالْقَمَرَ
اور چاند کو
رَاَيْتُهُمْ
میں نے دیکھا ان کو
لِيْ سٰجِدِيْنَ
میرے لیے سجدہ کررہے ہیں

یہ اُس وقت کا ذکر ہے جب یوسفؑ نے اپنے باپ سے کہا "ابا جان، میں نے خواب دیکھا ہے کہ گیارہ ستارے ہیں اور سورج اور چاند ہیں اور وہ مجھے سجدہ کر رہے ہیں"

تفسير

قَالَ يٰبُنَىَّ لَا تَقْصُصْ رُءْيَاكَ عَلٰۤى اِخْوَتِكَ فَيَكِيْدُوْا لَـكَ كَيْدًا ۗ اِنَّ الشَّيْطٰنَ لِلْاِنْسَانِ عَدُوٌّ مُّبِيْنٌ

قَالَ
اس نے کہا
يٰبُنَيَّ
اے میرے بیٹے
لَا تَقْصُصْ
نہ تم بتانا۔ نہ تم بیان کرنا
رُءْيَاكَ
اپنا خواب
عَلٰٓي اِخْوَتِكَ
اپنے بھائیوں پر
فَيَكِيْدُوْا
ورنہ وہ چال چلیں گے
لَكَ كَيْدًا
تیرے لیے ایک چال
ۭ اِنَّ الشَّيْطٰنَ
بیشک شیطان
لِلْاِنْسَانِ
انسان کے لیے
عَدُوٌّ
دشمن ہے
مُّبِيْنٌ
کھلا

جواب میں اس کے باپ نے کہا، "بیٹا، اپنا یہ خواب اپنے بھائیوں کو نہ سنانا ورنہ وہ تیرے درپے آزار ہو جائیں گے، حقیقت یہ ہے کہ شیطان آدمی کا کھلا دشمن ہے

تفسير

وَكَذٰلِكَ يَجْتَبِيْكَ رَبُّكَ وَيُعَلِّمُكَ مِنْ تَأْوِيْلِ الْاَحَادِيْثِ وَيُتِمُّ نِعْمَتَهٗ عَلَيْكَ وَعَلٰۤى اٰلِ يَعْقُوْبَ كَمَاۤ اَتَمَّهَا عَلٰۤى اَبَوَيْكَ مِنْ قَبْلُ اِبْرٰهِيْمَ وَاِسْحٰقَ ۗ اِنَّ رَبَّكَ عَلِيْمٌ حَكِيْمٌ

وَكَذٰلِكَ
اور اسی طرح
يَجْتَبِيْكَ
چن لے گا تجھ کو
رَبُّكَ
تیرا رب
وَيُعَلِّمُكَ
اور سکھائے گا تجھ کو
مِنْ تَاْوِيْلِ الْاَحَادِيْثِ
باتوں کا مطلب۔ باتوں کی تہہ تک پہنچنا
وَيُـــتِمُّ
اور پورا کردے گا
نِعْمَتَهٗ
اپنی نعمت کو
عَلَيْكَ
تجھ پر
وَعَلٰٓي اٰلِ يَعْقُوْبَ
اور آل یعقوب پر
كَمَآ
جیسا کہ
اَتَمَّــهَا
اس نے پورا کیا اس کو
عَلٰٓي اَبَوَيْكَ
تیرے دو باپوں پر
مِنْ
سے
قَبْلُ اِبْرٰهِيْمَ
اس (سے) پہلے ابراہیم پر
وَاِسْحٰقَ
اور اسحاق
ۭ اِنَّ رَبَّكَ
بیشک تیرا رب
عَلِيْمٌ
علم والا
حَكِيْمٌ
حکمت والا ہے

اور ایسا ہی ہوگا (جیسا تو نے خواب میں دیکھا ہے کہ) تیرا رب تجھے (اپنے کام کے لیے) منتخب کرے گا اور تجھے باتوں کی تہ تک پہنچنا سکھائے گا اور تیرے اوپر اور آل یعقوبؑ پر اپنی نعمت اسی طرح پوری کرے گا جس طرح اس سے پہلے وہ تیرے بزرگوں، ابراہیمؑ اور اسحاقؑ پر کر چکا ہے، یقیناً تیرا رب علیم اور حکیم ہے"

تفسير

لَقَدْ كَانَ فِىْ يُوْسُفَ وَاِخْوَتِهٖۤ اٰيٰتٌ لِّـلسَّاۤٮِٕلِيْنَ

لَقَدْ
البتہ تحقیق
كَانَ
ہیں
فِيْ يُوْسُفَ
یوسف میں
وَاِخْوَتِهٖٓ
اور اس کے بھائیوں میں
اٰيٰتٌ
نشانیاں
لِّلسَّاۗىِٕلِيْنَ
سوال کرنے والوں کے لیے

حقیقت یہ ہے کہ یوسفؑ اور اس کے بھائیوں کے قصہ میں اِن پوچھنے والوں کے لیے بڑی نشانیاں ہیں

تفسير

اِذْ قَالُوْا لَيُوْسُفُ وَاَخُوْهُ اَحَبُّ اِلٰۤى اَبِيْنَا مِنَّا وَنَحْنُ عُصْبَةٌ ۗ اِنَّ اَبَانَا لَفِىْ ضَلٰلٍ مُّبِيْنِ ۙ

اِذْ قَالُوْا
جب انہوں نے کہا تھا
لَيُوْسُفُ
بلاشبہ یوسف
وَاَخُوْهُ
اور اس کا بھائی
اَحَبُّ
زیادہ پیارے ہیں۔ محبوب ہیں
اِلٰٓي اَبِيْنَا
طرف ہمارے باپ کے
مِنَّا
بہ نسبت ہمارے
وَنَحْنُ
حالانکہ ہم
عُصْبَةٌ
ایک گروہ ہیں۔ جتھہ ہیں
ۭ اِنَّ اَبَانَا
بیشک ہمارے والد
لَفِيْ ضَلٰلٍ مُّبِيْنِۨ
البتہ واضح بھول میں ہیں

یہ قصہ یوں شروع ہوتا ہے کہ اس کے بھائیوں نے آپس میں کہا "یہ یوسفؑ اور اس کا بھائی، دونوں ہمارے والد کو ہم سب سے زیادہ محبوب ہیں حالانکہ ہم ایک پورا جتھا ہیں سچی بات یہ ہے کہ ہمارے ابا جان با لکل ہی بہک گئے ہیں

تفسير

قْتُلُوْا يُوْسُفَ اَوِ اطْرَحُوْهُ اَرْضًا يَّخْلُ لَـكُمْ وَجْهُ اَبِيْكُمْ وَ تَكُوْنُوْا مِنْۢ بَعْدِهٖ قَوْمًا صٰلِحِيْنَ

اقْــتُلُوْا
قتل کردو
يُوْسُفَ
یوسف کو
اَوِ اطْرَحُوْهُ
یا پھینک دو اس کو
اَرْضًا
کسی زمین میں
يَّخْلُ
خالی ہوجائے گا
لَكُمْ
تمہارے لیے
وَجْهُ
چہرہ
اَبِيْكُمْ
تمہارے باپ کا
وَتَكُوْنُوْا
اور تم ہوجانا
مِنْۢ بَعْدِهٖ
اس کام کے بعد
قَوْمًا
لوگ
صٰلِحِيْنَ
نیک

چلو یوسفؑ کو قتل کر دو یا اسے کہیں پھینک دو تاکہ تمہارے والد کی توجہ صرف تمہاری ہی طرف ہو جائے یہ کام کر لینے کے بعد پھر نیک بن رہنا"

تفسير

قَالَ قَاۤٮِٕلٌ مِّنْهُمْ لَا تَقْتُلُوْا يُوْسُفَ وَاَلْقُوْهُ فِىْ غَيٰبَتِ الْجُـبِّ يَلْتَقِطْهُ بَعْضُ السَّيَّارَةِ اِنْ كُنْتُمْ فٰعِلِيْنَ

قَالَ
کہا
قَاۗىِٕلٌ
ایک کہنے والے نے
مِّنْهُمْ
انہی میں سے
لَا تَـقْتُلُوْا
مت قتل کرو
يُوْسُفَ
یوسف کو
وَاَلْقُوْهُ
بلکہ ڈال دو اس کو
فِيْ غَيٰبَتِ الْجُبِّ
اندھیرے کنوئیں میں۔ کنوئیں کی گہرائی میں
يَلْتَقِطْهُ
اٹھا لے گا اس کو
بَعْضُ السَّـيَّارَةِ
کوئی قافلہ
اِنْ كُنْتُمْ
اگر ہو تم
فٰعِلِيْنَ
کرنے والے

اس پر ان میں سے ایک بولا "یوسفؑ کو قتل نہ کرو، اگر کچھ کرنا ہی ہے تو اسے کسی اندھے کنویں میں ڈال دو کوئی آتا جاتا قافلہ اسے نکال لے جائے گا"

تفسير
کے بارے میں معلومات :
یوسف
القرآن الكريم:يوسف
آية سجدہ (سجدة):-
سورۃ کا نام (latin):Yusuf
سورہ نمبر:12
کل آیات:111
کل کلمات:1600
کل حروف:7166
کل رکوعات:12
مقام نزول:مکہ مکرمہ
ترتیب نزولی:53
آیت سے شروع:1596