Skip to main content
bismillah
الٓرۚ
ا ل ر
كِتَٰبٌ
یہ ایک کتاب ہے
أَنزَلْنَٰهُ
نازل کیا ہم نے اس کو
إِلَيْكَ
تیری طرف
لِتُخْرِجَ
تاکہ تو نکالے
ٱلنَّاسَ
لوگوں کو
مِنَ
سے
ٱلظُّلُمَٰتِ
اندھیروں
إِلَى
طرف
ٱلنُّورِ
روشنی کی
بِإِذْنِ
اذن سے
رَبِّهِمْ
ان کے رب کے
إِلَىٰ
طرف
صِرَٰطِ
راستے کے
ٱلْعَزِيزِ
زبردست
ٱلْحَمِيدِ
تعریف والے (رب کے)

ا ل ر اے محمدؐ، یہ ایک کتاب ہے جس کو ہم نے تمہاری طرف نازل کیا ہے تاکہ تم لوگوں کو تاریکیوں سے نکال کر روشنی میں لاؤ، ان کے رب کی توفیق سے، اُس خدا کے راستے پر جو زبردست اور اپنی ذات میں آپ محمود ہے

تفسير
ٱللَّهِ
اللہ تعالیٰ
ٱلَّذِى
وہ ذات
لَهُۥ
اسی کے لئے ہے
مَا
جو کچھ
فِى
میں ہے
ٱلسَّمَٰوَٰتِ
آسمانوں
وَمَا
اور جو
فِى
میں ہے
ٱلْأَرْضِۗ
زمین
وَوَيْلٌ
اور ہلاکت ہے
لِّلْكَٰفِرِينَ
کافروں کے لئے
مِنْ
سے
عَذَابٍ
عذاب
شَدِيدٍ
سخت

اور زمین اور آسمانوں کی ساری موجودات کا مالک ہے اور سخت تباہ کن سزا ہے قبول حق سے انکار کرنے والوں کے لیے

تفسير
ٱلَّذِينَ
وہ لوگ
يَسْتَحِبُّونَ
جو ترجیح دیتے ہیں
ٱلْحَيَوٰةَ
زندگی کو
ٱلدُّنْيَا
دنیا کی
عَلَى
پر
ٱلْءَاخِرَةِ
آخرت
وَيَصُدُّونَ
اور وہ روکتے ہیں
عَن
سے
سَبِيلِ
راستے
ٱللَّهِ
اللہ کے
وَيَبْغُونَهَا
اور تلاش کرتے ہیں اس میں
عِوَجًاۚ
ٹیڑھا پن
أُو۟لَٰٓئِكَ
یہی لوگ
فِى
میں ہیں
ضَلَٰلٍۭ
گمراہی
بَعِيدٍ
دور کی

جو دنیا کی زندگی کو آخرت پر ترجیح دیتے ہیں، جو اللہ کے راستے سے لوگوں کو روک رہے ہیں اور چاہتے ہیں کہ یہ راستہ (ان کی خواہشات کے مطابق) ٹیٹرھا ہو جائے یہ لوگ گمراہی میں بہت دور نکل گئے ہیں

تفسير
وَمَآ
اور نہیں
أَرْسَلْنَا
بھیجا ہم نے
مِن
کوئی
رَّسُولٍ
رسول
إِلَّا
مگر
بِلِسَانِ
اس کی زبان میں
قَوْمِهِۦ
قوم کی
لِيُبَيِّنَ
تاکہ وہ بیان کرے
لَهُمْۖ
ان کے لئے
فَيُضِلُّ
پس بھٹکا دیتا ہے
ٱللَّهُ
اللہ
مَن
جس کو
يَشَآءُ
چاہتا ہے
وَيَهْدِى
اور ہدایت دیتا ہے
مَن
جس کو
يَشَآءُۚ
چاہتا ہے
وَهُوَ
اور وہ
ٱلْعَزِيزُ
زبردست ہے ،
ٱلْحَكِيمُ
حکمت والا ہے

ہم نے اپنا پیغام دینے کے لیے جب کبھی کوئی رسول بھیجا ہے، اُس نے اپنی قوم ہی کی زبان میں پیغام دیا ہے تاکہ وہ انہیں اچھی طرح کھول کر بات سمجھائے پھر اللہ جسے چاہتا ہے بھٹکا دیتا ہے اور جسے چاہتا ہے ہدایت بخشتا ہے، وہ بالا دست اور حکیم ہے

تفسير
وَلَقَدْ
اور البتہ تحقیق
أَرْسَلْنَا
بھیجا ہم نے
مُوسَىٰ
موسیٰ کو
بِـَٔايَٰتِنَآ
اپنی آیات کے ساتھ
أَنْ
یہ کہ
أَخْرِجْ
نکال
قَوْمَكَ
اپنی قوم کو
مِنَ
سے
ٱلظُّلُمَٰتِ
اندھیروں
إِلَى
طرف
ٱلنُّورِ
روشنی کی
وَذَكِّرْهُم
اور نصیحت کرو ان کو
بِأَيَّىٰمِ
دنوں کے
ٱللَّهِۚ
ساتھ اللہ کے
إِنَّ
بیشک
فِى
اس میں
ذَٰلِكَ
لَءَايَٰتٍ
البتہ نشانیاں ہیں
لِّكُلِّ
واسطے ہر
صَبَّارٍ
بہت صبر کرنے والے
شَكُورٍ
بہت شکر کرنے والے کے لئے

ہم اِس سے پہلے موسیٰؑ کو بھی اپنی نشانیوں کے ساتھ بھیج چکے ہیں اسے بھی ہم نے حکم دیا تھا کہ اپنی قوم کو تاریکیوں سے نکال کر روشنی میں لا اور انہیں تاریخ الٰہی کے سبق آموز واقعات سنا کر نصیحت کر اِن واقعات میں بڑی نشانیاں ہیں ہر اُس شخص کے لیے جو صبر اور شکر کرنے والا ہو

تفسير
وَإِذْ
اور جب
قَالَ
کہا
مُوسَىٰ
موسیٰ نے
لِقَوْمِهِ
اپنی قوم سے
ٱذْكُرُوا۟
یاد کرو
نِعْمَةَ
نعمت کو
ٱللَّهِ
اللہ کی
عَلَيْكُمْ
جو تم پر ہے
إِذْ
جب
أَنجَىٰكُم
اس نے نجات دی تم کو
مِّنْ
سے
ءَالِ
آل
فِرْعَوْنَ
فرعون (سے)
يَسُومُونَكُمْ
وہ چکھاتے تھے تم کو
سُوٓءَ
برا
ٱلْعَذَابِ
عذاب
وَيُذَبِّحُونَ
اور وہ ذبح کرتے تھے
أَبْنَآءَكُمْ
تمہارے بیٹوں کو
وَيَسْتَحْيُونَ
اور زندہ چھوڑ دیتے تھے
نِسَآءَكُمْۚ
تمہاری عورتوں کو
وَفِى
اور اس میں
ذَٰلِكُم
بَلَآءٌ
آزمائش تھی
مِّن
سے
رَّبِّكُمْ
تمہارے رب کی طرف سے
عَظِيمٌ
بہت بڑی

یاد کرو جب موسیٰؑ نے اپنی قوم سے کہا "اللہ کے اُس احسان کو یاد رکھو جو اس نے تم پر کیا ہے اس نے تم کو فرعون والوں سے چھڑایا جو تم کو سخت تکلیفیں دیتے تھے، تمہارے لڑکوں کو قتل کر ڈالتے تھے اور تمہاری عورتوں کو زندہ بچا رکھتے تھے اس میں تمہارے رب کی طرف سے تمہاری بڑی آزمائش تھی

تفسير
وَإِذْ
اور جب
تَأَذَّنَ
خبردار کردیا
رَبُّكُمْ
تمہارے رب نے
لَئِن
البتہ
شَكَرْتُمْ
اگر تم شکر کرو گے
لَأَزِيدَنَّكُمْۖ
البتہ میں ضرور زیادہ دوں گا تم کو
وَلَئِن
اور البتہ
كَفَرْتُمْ
اگر ناشکری کی تم نے
إِنَّ
بیشک
عَذَابِى
میرا عذاب
لَشَدِيدٌ
البتہ سخت ہے

اور یاد رکھو، تمہارے رب نے خبردار کر دیا تھا کہ اگر شکر گزار بنو گے تو میں تم کو اور زیادہ نوازوں گا اور اگر کفران نعمت کرو گے تو میری سزا بہت سخت ہے"

تفسير
وَقَالَ
اور کہا
مُوسَىٰٓ
موسیٰ نے
إِن
اگر تم
تَكْفُرُوٓا۟
کفر کرو
أَنتُمْ
تم
وَمَن
اور جو کوئی
فِى
میں ہے
ٱلْأَرْضِ
زمین
جَمِيعًا
سارے کے سارے
فَإِنَّ
تو بیشک
ٱللَّهَ
اللہ تعالیٰ
لَغَنِىٌّ
البتہ بےنیاز،
حَمِيدٌ
تعریف والا ہے

اور موسیٰؑ نے کہا کہ "اگر تم کفر کرو اور زمین کے سارے رہنے والے بھی کافر ہو جائیں تو اللہ بے نیاز اور اپنی ذات میں آپ محمود ہے"

تفسير
أَلَمْ
کیا نہیں
يَأْتِكُمْ
آئی تمہارے پاس
نَبَؤُا۟
خبر
ٱلَّذِينَ
ان لوگوں کی
مِن
جو
قَبْلِكُمْ
تم سے پہلے تھے
قَوْمِ
قوم
نُوحٍ
نوح کی
وَعَادٍ
اور عاد کی
وَثَمُودَۛ
اور ثمود کی
وَٱلَّذِينَ
اور ان لوگوں کی
مِنۢ
بَعْدِهِمْۛ
جو ان کے بعد تھے
لَا
نہیں
يَعْلَمُهُمْ
جانتا ان کو
إِلَّا
مگر
ٱللَّهُۚ
اللہ
جَآءَتْهُمْ
آئے ان کے پاس
رُسُلُهُم
ان کے رسول
بِٱلْبَيِّنَٰتِ
ساتھ روشن دلائل کے
فَرَدُّوٓا۟
تو انہوں نے پھیر دیا
أَيْدِيَهُمْ
اپنے ہاتھوں کو
فِىٓ
میں
أَفْوَٰهِهِمْ
اپنے مونہوں میں
وَقَالُوٓا۟
اور کہا
إِنَّا
بیشک
كَفَرْنَا
ہم کفر کرتے ہیں
بِمَآ
ساتھ اس کے
أُرْسِلْتُم
جو بھیجے گئے تم
بِهِۦ
ساتھ اس کے
وَإِنَّا
اور بیشک ہم
لَفِى
البتہ میں ہیں
شَكٍّ
شک
مِّمَّا
اس چیز سے
تَدْعُونَنَآ
جو تم بلاتے ہو ہم کو
إِلَيْهِ
اس کی طرف
مُرِيبٍ
بےچین ہیں

کیا تمہیں اُن قوموں کے حالات نہیں پہنچے جو تم سے پہلے گزر چکی ہیں؟ قوم نوحؑ، عاد، ثمود اور اُن کے بعد آنے والی بہت سی قومیں جن کا شمار اللہ ہی کو معلوم ہے؟ اُن کے رسول جب اُن کے پاس صاف صاف باتیں اور کھلی کھلی نشانیاں لیے ہوئے آئے تو اُنہوں نے اپنے منہ میں ہاتھ دبا لیے اور کہا کہ "جس پیغام کے ساتھ تم بھیجے گئے ہو ہم اس کو نہیں مانتے اور جس چیز کی تم ہمیں دعوت دیتے ہو اُس کی طرف سے ہم سخت خلجان آمیز شک میں پڑے ہوئے ہیں"

تفسير
قَالَتْ
کہا
رُسُلُهُمْ
ان کے رسولوں نے
أَفِى
کیا بارے میں
ٱللَّهِ
اللہ کے
شَكٌّ
شک کرتے ہو
فَاطِرِ
پیدا کرنے والا ہے
ٱلسَّمَٰوَٰتِ
آسمانوں کا
وَٱلْأَرْضِۖ
اور زمین کا
يَدْعُوكُمْ
وہ بلاتا ہے تم کو
لِيَغْفِرَ
تاکہ وہ بخش دے
لَكُم
تم کو
مِّن
میں سے
ذُنُوبِكُمْ
تمہارے گناہوں
وَيُؤَخِّرَكُمْ
اور مؤخر کردے وہ تم کو
إِلَىٰٓ
طرف
أَجَلٍ
وقت تک کے لئے
مُّسَمًّىۚ
ایک مقررہ
قَالُوٓا۟
انہوں نے کہا
إِنْ
نہیں
أَنتُمْ
تم
إِلَّا
مگر
بَشَرٌ
ایک انسان ہو
مِّثْلُنَا
ہم جیسے
تُرِيدُونَ
تم چاہتے ہو
أَن
کہ
تَصُدُّونَا
تم روکو ہم کو
عَمَّا
اس سے جو
كَانَ
کرتے
يَعْبُدُ
عبادت
ءَابَآؤُنَا
ہمارے باپ دادا
فَأْتُونَا
پس لے آؤ ہمارے پاس
بِسُلْطَٰنٍ
دلیل
مُّبِينٍ
کوئی کھلی

اُن کے رسولوں نے کہا "کیا خدا کے بارے میں شک ہے جو آسمانوں اور زمین کا خالق ہے؟ وہ تمہیں بلا ر =ہا ہے تاکہ تمہارے قصور معاف کرے اور تم کو ایک مدت مقرر تک مہلت دے" اُنہوں نے جواب دیا "تم کچھ نہیں ہو مگر ویسے ہی انسان جیسے ہم ہیں تم ہمیں اُن ہستیوں کی بندگی سے روکنا چاہتے ہو جن کی بندگی باپ دادا سے ہوتی چلی آ رہی ہے اچھا تو لاؤ کوئی صریح سند"

تفسير
کے بارے میں معلومات :
ابراہیم
القرآن الكريم:ابراهيم
آية سجدہ (سجدة):-
سورۃ کا نام (latin):Ibrahim
سورہ نمبر:14
کل آیات:52
کل کلمات:861
کل حروف:3434
کل رکوعات:7
مقام نزول:مکہ مکرمہ
ترتیب نزولی:72
آیت سے شروع:1750