Skip to main content
bismillah
يَٰٓأَيُّهَا
اے
ٱلنَّاسُ
لوگو
ٱتَّقُوا۟
ڈرو
رَبَّكُمْۚ
اپنے رب سے
إِنَّ
بیشک
زَلْزَلَةَ
زلزلہ
ٱلسَّاعَةِ
قیامت کا
شَىْءٌ
چیز ہے
عَظِيمٌ
بہت بڑی

لوگو، اپنے رب کے غضب سے بچو، حقیقت یہ ہے کہ قیامت کا زلزلہ بڑی (ہولناک) چیز ہے

تفسير
يَوْمَ
جس دن
تَرَوْنَهَا
تم دیکھو گے اس کو
تَذْهَلُ
بھول جائے گی
كُلُّ
ہر
مُرْضِعَةٍ
دودھ پلانے والی
عَمَّآ
اس کو
أَرْضَعَتْ
جو وہ دودھ پلاتی تھی
وَتَضَعُ
اور گرا دے گی۔ رکھ دے گی
كُلُّ
ہر
ذَاتِ
حَمْلٍ
حمل والی
حَمْلَهَا
اپنے حمل کو
وَتَرَى
اور تم دیکھو گے
ٱلنَّاسَ
لوگوں کو
سُكَٰرَىٰ
کہ وہ نشے میں ہیں
وَمَا
حالانکہ نہ ہوں گے
هُم
وہ
بِسُكَٰرَىٰ
نشے میں
وَلَٰكِنَّ
لیکن
عَذَابَ
عذاب
ٱللَّهِ
اللہ کا
شَدِيدٌ
بہت سخت ہوگا

جس روز تم اسے دیکھو گے، حال یہ ہو گا کہ ہر دودھ پلانے والی اپنے دودھ پیتے بچّے سے غافل ہو جائے گی، ہر حاملہ کا حمل گر جائے گا، اور لوگ تم کو مدہوش نظر آئیں گے، حالانکہ وہ نشے میں نہ ہوں گے، بلکہ اللہ کا عذاب ہی کچھ ایسا سخت ہوگا

تفسير
وَمِنَ
اور کوئی
ٱلنَّاسِ
لوگوں میں سے
مَن
جو
يُجَٰدِلُ
جھگڑتا ہے
فِى
میں
ٱللَّهِ
اللہ کے بارے
بِغَيْرِ
بغیر
عِلْمٍ
علم کے
وَيَتَّبِعُ
اور پیروی کرتا ہے
كُلَّ
ہر
شَيْطَٰنٍ
شیطان کی
مَّرِيدٍ
سرکش

بعض لوگ ایسے ہیں جو عِلم کے بغیر اللہ کے بارے میں بحثیں کرتے ہیں اور ہر شیطان سرکش کی پیروی کرنے لگتے ہیں

تفسير
كُتِبَ
لکھ دیا گیا
عَلَيْهِ
اس پر
أَنَّهُۥ
کہ بیشک وہ
مَن
جو
تَوَلَّاهُ
اس کو دوست بنائے گا
فَأَنَّهُۥ
تو بیشک وہ
يُضِلُّهُۥ
اس کو بھٹکا دے گا
وَيَهْدِيهِ
اور رہنمائی کرے گا اس کی
إِلَىٰ
کی طرف
عَذَابِ
عذاب
ٱلسَّعِيرِ
جلنے کے

حالانکہ اُس کے تو نصیب ہی میں یہ لکھا ہے کہ جو اس کو دوست بنائے گا اسے وہ گمراہ کر کے چھوڑے گا اور عذاب جہنّم کا راستہ دکھائے گا

تفسير
يَٰٓأَيُّهَا
اے
ٱلنَّاسُ
لوگو
إِن
اگر
كُنتُمْ
ہو تم
فِى
میں
رَيْبٍ
شک
مِّنَ
میں
ٱلْبَعْثِ
دوبارہ جی اٹھنے
فَإِنَّا
تو بیشک
خَلَقْنَٰكُم
ہم نے پیدا کیا تم کو
مِّن
سے
تُرَابٍ
مٹی
ثُمَّ
پھر
مِن
سے
نُّطْفَةٍ
نطفے
ثُمَّ
پھر
مِنْ
سے
عَلَقَةٍ
خون کی پھٹکی
ثُمَّ
پھر
مِن
سے
مُّضْغَةٍ
گوشت کے لوتھڑے (سے)
مُّخَلَّقَةٍ
صورت دیا گیا
وَغَيْرِ
اور بے
مُخَلَّقَةٍ
نقشہ۔ بےصورت دیا گیا
لِّنُبَيِّنَ
تاکہ ہم بیان کریں
لَكُمْۚ
تمہارے لیے
وَنُقِرُّ
اور ہم ٹھہراتے ہیں
فِى
میں
ٱلْأَرْحَامِ
رحموں
مَا
جو
نَشَآءُ
ہم چاہتے ہیں
إِلَىٰٓ
تک
أَجَلٍ
وقت
مُّسَمًّى
مقرر کے
ثُمَّ
پھر
نُخْرِجُكُمْ
ہم نکال لاتے ہیں تم کو
طِفْلًا
بچے کی شکل میں
ثُمَّ
پھر
لِتَبْلُغُوٓا۟
تاکہ تم پہنچو
أَشُدَّكُمْۖ
اپنے کمال کو۔ پوری جوانی کو
وَمِنكُم
اور تم میں سے کوئی
مَّن
جو
يُتَوَفَّىٰ
فوت کیا جاتا ہے
وَمِنكُم
اور تم میں سے کوئی
مَّن
جو
يُرَدُّ
لوٹایا جاتا ہے
إِلَىٰٓ
طرف
أَرْذَلِ
ناکارہ
ٱلْعُمُرِ
عمر کے
لِكَيْلَا
تاکہ نہ
يَعْلَمَ
جانے
مِنۢ
بَعْدِ
بعد
عِلْمٍ
علم کے
شَيْـًٔاۚ
کچھ بھی
وَتَرَى
اور تم دیکھتے ہو
ٱلْأَرْضَ
زمین کو
هَامِدَةً
خشک ہے
فَإِذَآ
تو جب
أَنزَلْنَا
اتارتے ہیں ہم
عَلَيْهَا
اس پر
ٱلْمَآءَ
پانی
ٱهْتَزَّتْ
ہل جاتی ہے۔ پھبک اٹھتی ہے
وَرَبَتْ
اور پھول جاتی ہے۔ بڑھ جاتی ہے
وَأَنۢبَتَتْ
اور اگاتی ہے
مِن
كُلِّ
ہر
زَوْجٍۭ
قسم کی۔ کے
بَهِيجٍ
رونق والے (نباتات)

لوگو، اگر تمہیں زندگی بعد موت کے بارے میں کچھ شک ہے تو تمہیں معلوم ہو کہ ہم نے تم کو مٹی سے پیدا کیا ہے، پھر نطفے سے، پھر خون کے لوتھڑے سے، پھر گوشت کی بوٹی سے جو شکل والی بھی ہوتی ہے اور بے شکل بھی (یہ ہم اس لیے بتا رہے ہیں) تاکہ تم پر حقیقت واضح کر دیں ہم جس (نطفے) کو چاہتے ہیں ایک وقت خاص تک رحموں میں ٹھیرائے رکھتے ہیں، پھر تم کو ایک بچّے کی صورت میں نکال لاتے ہیں (پھر تمہیں پرورش کرتے ہیں) تاکہ تم اپنی پُوری جوانی کو پہنچو اور تم میں سے کوئی پہلے ہی واپس بلا لیا جاتا ہے اور کوئی بدترین عمر کی طرف پھیر دیا جاتا ہے تاکہ سب کچھ جاننے کے بعد پھر کچھ نہ جانے اور تم دیکھتے ہو کہ زمین سوکھی پڑی ہے، پھر جہاں ہم نے اُس پر مینہ برسایا کہ یکایک وہ پھبک اٹھی اور پھول گئی اور اس نے ہر قسم کی خوش منظر نباتات اگلنی شروع کر دی

تفسير
ذَٰلِكَ
یہ
بِأَنَّ
بوجہ اس کے کہ بیشک
ٱللَّهَ
اللہ تعالیٰ
هُوَ
وہی
ٱلْحَقُّ
حق ہے
وَأَنَّهُۥ
اور بیشک وہ
يُحْىِ
زندہ کرے گا
ٱلْمَوْتَىٰ
مردوں کو
وَأَنَّهُۥ
اور بیشک وہ
عَلَىٰ
پر
كُلِّ
ہر
شَىْءٍ
چیز
قَدِيرٌ
قدرت رکھنے والا ہے

یہ سب کچھ اس وجہ سے ہے کہ اللہ ہی حق ہے، اور وہ مُردوں کو زندہ کرتا ہے، اور وہ ہر چیز پر قادر ہے،

تفسير
وَأَنَّ
اور بیشک
ٱلسَّاعَةَ
قیامت
ءَاتِيَةٌ
آنے والی ہے
لَّا
نہیں
رَيْبَ
کوئی شک
فِيهَا
اس میں
وَأَنَّ
اور بیشک
ٱللَّهَ
اللہ تعالیٰ
يَبْعَثُ
اٹھائے گا
مَن
جو
فِى
میں ہیں
ٱلْقُبُورِ
قبروں

اور یہ (اِس بات کی دلیل ہے) کہ قیامت کی گھڑی آ کر رہے گی، اس میں کسی شک کی گنجائش نہیں، اور اللہ ضرور اُن لوگوں کو اٹھائے گا جو قبروں میں جا چکے ہیں

تفسير
وَمِنَ
کوئی
ٱلنَّاسِ
اور لوگوں میں سے
مَن
جو
يُجَٰدِلُ
جھگڑتا ہے
فِى
بارے میں
ٱللَّهِ
اللہ کے
بِغَيْرِ
بغیر
عِلْمٍ
علم کے
وَلَا
اور بغیر
هُدًى
رہنمائی کے
وَلَا
اور بغیر
كِتَٰبٍ
کتاب
مُّنِيرٍ
روشن کے

بعض اور لوگ ایسے ہیں جو کسی علم اور ہدایت اور روشنی بخشنے والی کتاب کے بغیر، گردن اکڑائے ہوئے

تفسير
ثَانِىَ
موڑنے والا ہے
عِطْفِهِۦ
شانے اپنے۔ کندھے اپنے۔ پہلو اپنا
لِيُضِلَّ
تاکہ بھٹکا دے
عَن
سے
سَبِيلِ
راستے
ٱللَّهِۖ
اللہ کے
لَهُۥ
اس کے لیے
فِى
میں
ٱلدُّنْيَا
دنیا
خِزْىٌۖ
رسوائی ہے
وَنُذِيقُهُۥ
اور ہم چکھائیں گے اس کو
يَوْمَ
دن
ٱلْقِيَٰمَةِ
قیامت کے
عَذَابَ
عذاب
ٱلْحَرِيقِ
جلنے کا

خدا کے بارے میں جھگڑتے ہیں تاکہ لوگوں کو راہِ خدا سے بھٹکا دیں ایسے شخص کے لیے دُنیا میں رُسوائی ہے اور قیامت کے روز اُس کو ہم آگ کے عذاب کا مزا چکھائیں گے

تفسير
ذَٰلِكَ
یہ
بِمَا
بوجہ اس کے
قَدَّمَتْ
جو آگے بھیجا
يَدَاكَ
تیرے دونوں ہاتھوں نے
وَأَنَّ
اور بیشک
ٱللَّهَ
اللہ تعالیٰ
لَيْسَ
نہیں ہے
بِظَلَّٰمٍ
ظلم کرنے والا
لِّلْعَبِيدِ
بندوں کے لیے

یہ ہے تیرا وہ مستقبل جو تیرے اپنے ہاتھوں نے تیرے لیے تیار کیا ہے ورنہ اللہ اپنے بندوں پر ظلم کرنے والا نہیں ہے

تفسير
کے بارے میں معلومات :
الحج
القرآن الكريم:الحج
آية سجدہ (سجدة):18,77
سورۃ کا نام (latin):Al-Hajj
سورہ نمبر:22
کل آیات:78
کل کلمات:1291
کل حروف:5570
کل رکوعات:10
مقام نزول:مدینہ منورہ
ترتیب نزولی:103
آیت سے شروع:2595