Skip to main content
ARBNDEENIDTRUR
bismillah

حٰمٓ ۚ

حٰـمۗ
حم

ح م

تفسير

وَالْكِتٰبِ الْمُبِيْنِ ۙ

وَالْكِتٰبِ الْمُبِيْنِ
قسم ہے واضح کتاب کی

قسم ہے اِس واضح کتاب کی

تفسير

اِنَّا جَعَلْنٰهُ قُرْءٰنًا عَرَبِيًّا لَّعَلَّكُمْ تَعْقِلُوْنَۚ

اِنَّا
بیشک ہم نے
جَعَلْنٰهُ
بنایا ہم نے اس کو
قُرْءٰنًا
قرآن
عَرَبِيًّا
عربی
لَّعَلَّكُمْ تَعْقِلُوْنَ
تاکہ تم ، تم سمجھ سکو

کہ ہم نے اِسے عربی زبان کا قرآن بنایا ہے تاکہ تم لوگ اِسے سمجھو

تفسير

وَاِنَّهٗ فِىْۤ اُمِّ الْكِتٰبِ لَدَيْنَا لَعَلِىٌّ حَكِيْمٌۗ

وَاِنَّهٗ
اور بیشک وہ
فِيْٓ اُمِّ الْكِتٰبِ
ام الکتاب میں ہے
لَدَيْنَا
ہمارے پاس
لَعَلِيٌّ حَكِيْمٌ
البتہ بلند ہے، حکمت سے لبریز ہے

اور در حقیقت یہ ام الکتاب میں ثبت ہے، ہمارے ہاں بڑی بلند مرتبہ اور حکمت سے لبریز کتاب

تفسير

اَفَنَضْرِبُ عَنْكُمُ الذِّكْرَ صَفْحًا اَنْ كُنْتُمْ قَوْمًا مُّسْرِفِيْنَ

اَفَنَضْرِبُ
کیا بھلا ہم چھوڑ دیں
عَنْكُمُ الذِّكْرَ
تم سے ذکر کرنا
صَفْحًا
درگزر کرتے ہوئے۔ اعراض کرنے کی وجہ سے
اَنْ كُنْتُمْ
کہ ہو تم
قَوْمًا
ایک قوم
مُّسْرِفِيْنَ
حد سے بڑھنے والی

اب کیا ہم تم سے بیزار ہو کر یہ درس نصیحت تمہارے ہاں بھیجنا چھوڑ دیں صرف اِس لیے کہ تم حد سے گزرے ہوئے لوگ ہو؟

تفسير

وَكَمْ اَرْسَلْنَا مِنْ نَّبِىٍّ فِى الْاَوَّلِيْنَ

وَكَمْ اَرْسَلْنَا
اور کتنے ہی بھیجے ہم نے
مِنْ نَّبِيٍّ
نبیوں میں سے
فِي الْاَوَّلِيْنَ
پہلوں میں

پہلے گزری ہوئی قوموں میں بھی بارہا ہم نے نبی بھیجے ہیں

تفسير

وَمَا يَأْتِيْهِمْ مِّنْ نَّبِىٍّ اِلَّا كَانُوْا بِهٖ يَسْتَهْزِءُوْنَ

وَمَا يَاْتِيْهِمْ
اور نہیں آیا ان کے پاس
مِّنْ نَّبِيٍّ
کوئی نبی
اِلَّا كَانُوْا
مگر وہ تھے
بِهٖ
ساتھ اس کے
يَسْتَهْزِءُوْنَ
اتہزاء کرتے۔ مذاق اڑاتے

کبھی ایسا نہیں ہوا کہ کوئی نبی اُن کے ہاں آیا ہو اور انہوں نے اُس کا مذاق نہ اڑایا ہو

تفسير

فَاَهْلَـكْنَاۤ اَشَدَّ مِنْهُمْ بَطْشًا وَّمَضٰى مَثَلُ الْاَوَّلِيْنَ

فَاَهْلَكْنَآ
تو ہلاک کردیا ہم نے
اَشَدَّ مِنْهُمْ
سب سے طاقتور کو ان میں سے
بَطْشًا
پکڑ میں
وَّمَضٰى
اور گزر چکی
مَثَلُ الْاَوَّلِيْنَ
مثال پہلوں کی

پھر جو لوگ اِن سے بدرجہا زیادہ طاقتور تھے اُنہیں ہم نے ہلاک کر دیا، پچھلی قوموں کی مثالیں گزر چکی ہیں

تفسير

وَلَٮِٕنْ سَاَلْتَهُمْ مَّنْ خَلَقَ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضَ لَيَقُوْلُنَّ خَلَقَهُنَّ الْعَزِيْزُ الْعَلِيْمُۙ

وَلَىِٕنْ سَاَلْتَهُمْ
اور البتہ اگر تم پوچھو ان سے
مَّنْ
کس نے
خَلَقَ السَّمٰوٰتِ
پیدا کیا آسمانوں کو
وَالْاَرْضَ
اور زمین کو
لَيَقُوْلُنَّ
البتہ وہ ضرور کہیں گے
خَلَقَهُنَّ
پیدا کیا ان کو
الْعَزِيْزُ الْعَلِيْمُ
زبردست۔ غالب، علم والے نے

اگر تم اِن لوگوں سے پوچھو کہ زمین اور آسمانوں کو کس نے پیدا کیا ہے تو یہ خود کہیں گے کہ انہیں اُسی زبردست علیم ہستی نے پیدا کیا ہے

تفسير

الَّذِىْ جَعَلَ لَـكُمُ الْاَرْضَ مَهْدًا وَّ جَعَلَ لَكُمْ فِيْهَا سُبُلًا لَّعَلَّكُمْ تَهْتَدُوْنَۚ

الَّذِيْ
جس نے
جَعَلَ
بنایا
لَكُمُ الْاَرْضَ
تمہارے لیے زمین کو
مَهْدًا
گہوارہ
وَّجَعَلَ لَكُمْ
اور بنائے تمہارے لیے
فِيْهَا
اس میں
سُبُلًا
راستے
لَّعَلَّكُمْ تَهْتَدُوْنَ
تاکہ تم، تم ہدایت پاؤ

وہی نا جس نے تمہارے لیے اس زمین کو گہوارہ بنایا اور اس میں تمہاری خاطر راستے بنا دیے تاکہ تم اپنی منزل مقصود کی راہ پاسکو

تفسير
کے بارے میں معلومات :
الزخرف
القرآن الكريم:الزخرف
آية سجدہ (سجدة):-
سورۃ کا نام (latin):Az-Zukhruf
سورہ نمبر:43
کل آیات:89
کل کلمات:-
کل حروف:3400
کل رکوعات:7
مقام نزول:مکہ مکرمہ
ترتیب نزولی:63
آیت سے شروع:4325