Skip to main content
ARBNDEENIDTRUR
bismillah

هَلْ اَتٰى عَلَى الْاِنْسَانِ حِيْنٌ مِّنَ الدَّهْرِ لَمْ يَكُنْ شَيْـًٔـا مَّذْكُوْرًا

عَلَي الْاِنْسَانِ
ایک وقت
حِيْنٌ
زمانے میں سے
مِّنَ الدَّهْرِ
نہ تھا
لَمْ يَكُنْ
کوئی چیز
شَيْـــًٔا
قابل ذکر
مَّذْكُوْرًا
قابل ذکر

کیا انسان پر لا متناہی زمانے کا ایک وقت ایسا بھی گزرا ہے جب وہ کوئی قابل ذکر چیز نہ تھا؟

تفسير

اِنَّا خَلَقْنَا الْاِنْسَانَ مِنْ نُّطْفَةٍ اَمْشَاجٍۖ نَّبْتَلِيْهِ فَجَعَلْنٰهُ سَمِيْعًۢا بَصِيْرًا

اِنَّا
بیشک ہم نے
خَلَقْنَا الْاِنْسَانَ
پیدا کیا ہم نے انسان کو
مِنْ نُّطْفَةٍ
ایک نطفے سے
اَمْشَاجٍ ڰ
ملے ہوئے۔ مخلوط
نَّبْتَلِيْهِ
کہ ہم آزمائیں اس کو۔ آزمائش کریں اس کی
فَجَعَلْنٰهُ
تو بنایا ہم نے اس کو
سَمِيْعًۢا
سننے والا
بَصِيْرًا
دیکھنے والا

ہم نے انسان کو ایک مخلوط نطفے سے پیدا کیا تاکہ اس کا امتحان لیں اور اِس غرض کے لیے ہم نے اسے سننے اور دیکھنے والا بنایا

تفسير

اِنَّا هَدَيْنٰهُ السَّبِيْلَ اِمَّا شَاكِرًا وَّاِمَّا كَفُوْرًا

اِنَّا
بیشک ہم نے
هَدَيْنٰهُ
راہ دکھائی ہم نے اس کو۔ ہدایت دی ہم نے اس کو
السَّبِيْلَ
راستے کی
اِمَّا شَاكِرًا
خواہ شکر گزار ہو
وَّاِمَّا كَفُوْرًا
اور خواہ ناشکرا ہو

ہم نے اسے راستہ دکھا دیا، خواہ شکر کرنے والا بنے یا کفر کرنے والا

تفسير

اِنَّاۤ اَعْتَدْنَا لِلْكٰفِرِيْنَ سَلٰسِلَاۡ وَاَغْلٰلًا وَّسَعِيْرًا

اِنَّآ
بیشک ہم نے
اَعْتَدْنَا
تیار کیا ہم نے
لِلْكٰفِرِيْنَ
کافروں کے لیے
سَلٰسِلَا۟
زنجیروں کو
وَاَغْلٰلًا
اور طوق کو
وَّسَعِيْرًا
اور بھڑکتی آگ کو

کفر کرنے والوں کے لیے ہم نے زنجیریں اور طوق اور بھڑکتی ہوئی آگ مہیا کر رکھی ہے

تفسير

اِنَّ الْاَبْرَارَ يَشْرَبُوْنَ مِنْ كَأْسٍ كَانَ مِزَاجُهَا كَافُوْرًاۚ

اِنَّ الْاَبْرَارَ
بیشک نیک لوگ
يَشْرَبُوْنَ
پیئیں گے مِنْ كَاْسٍ

نیک لوگ (جنت میں) شراب کے ایسے ساغر پئیں گے جن میں آب کافور کی آمیزش ہوگی

تفسير

عَيْنًا يَّشْرَبُ بِهَا عِبَادُ اللّٰهِ يُفَجِّرُوْنَهَا تَفْجِيْرًا

عَيْنًا
ایک چشمہ ہے يَّشْرَبُ
تَفْجِيْرًا
پھاڑ لے جانا

یہ ایک بہتا چشمہ ہوگا جس کے پانی کے ساتھ اللہ کے بندے شراب پئیں گے اور جہاں چاہیں گے بسہولت اس کی شاخیں لیں گے

تفسير

يُوْفُوْنَ بِالنَّذْرِ وَيَخَافُوْنَ يَوْمًا كَانَ شَرُّهٗ مُسْتَطِيْرًا

يُوْفُوْنَ
وہ پوری کرتے ہیں
بِالنَّذْرِ
نذر۔ منت
وَيَخَافُوْنَ
اور وہ ڈرتے ہیں
يَوْمًا
ایک دن سے
كَانَ شَرُّهٗ
ہے اس کی آفت۔ اس کا شر
مُسْـتَطِيْرًا
پھیل جانے والا

یہ وہ لوگ ہونگے جو (دنیا میں) نذر پوری کرتے ہیں، اور اُس دن سے ڈرتے ہیں جس کی آفت ہر طرف پھیلی ہوئی ہوگی

تفسير

وَيُطْعِمُوْنَ الطَّعَامَ عَلٰى حُبِّهٖ مِسْكِيْنًا وَّيَتِيْمًا وَّاَسِيْرًا

وَيُطْعِمُوْنَ
اور وہ کھلاتے ہیں
الطَّعَامَ
کھانا
عَلٰي حُبِّهٖ
اس کی محبت میں
مِسْكِيْنًا
مسکین کو
وَّيَـتِـيْمًا
اور یتیم کو
وَّاَسِيْرًا
اور قیدی کو

اور اللہ کی محبت میں مسکین اور یتیم اور قیدی کو کھانا کھلاتے ہیں

تفسير

اِنَّمَا نُطْعِمُكُمْ لِـوَجْهِ اللّٰهِ لَا نُرِيْدُ مِنْكُمْ جَزَاۤءً وَّلَا شُكُوْرًا

اِنَّمَا
بیشک
نُـطْعِمُكُمْ
ہم کھلاتے ہیں تم کو
لِوَجْهِ اللّٰهِ
اللہ کی ذات کے لیے
لَا نُرِيْدُ
نہیں ہم چاہتے
مِنْكُمْ
تم سے
جَزَاۗءً
کوئی بدلہ
وَّلَا شُكُوْرًا
اور نہ شکریہ

(اور اُن سے کہتے ہیں کہ) ہم تمہیں صرف اللہ کی خاطر کھلا رہے ہیں، ہم تم سے نہ کوئی بدلہ چاہتے ہیں نہ شکریہ

تفسير

اِنَّا نَخَافُ مِنْ رَّبِّنَا يَوْمًا عَبُوْسًا قَمْطَرِيْرًا

اِنَّا
بیشک ہم
نَخَافُ
ہم ڈرتے ہیں
مِنْ رَّبِّنَا
اپنے رب سے
يَوْمًا
اس دن سے
عَبُوْسًا
منہ بنانے والا ہوگا
قَمْطَرِيْرًا
تیوری چڑھانے والا ہوگا

ہمیں تو اپنے رب سے اُس دن کے عذاب کا خوف لاحق ہے جو سخت مصیبت کا انتہائی طویل دن ہوگا

تفسير
کے بارے میں معلومات :
الدہر
القرآن الكريم:الانسان
آية سجدہ (سجدة):-
سورۃ کا نام (latin):Al-Insan
سورہ نمبر:76
کل آیات:31
کل کلمات:240
کل حروف:1054
کل رکوعات:2
مقام نزول:مدینہ منورہ
ترتیب نزولی:98
آیت سے شروع:5591