Skip to main content
ARBNDEENIDTRUR

وَاِذَا قِيْلَ لَهُمْ لَا تُفْسِدُوْا فِى الْاَرْضِۙ قَالُوْاۤ اِنَّمَا نَحْنُ مُصْلِحُوْنَ

وَ
اور
اِذَا
کہا جاتا ہے
قِيْلَ
ان کو
لَھُمْ
نہ
لَا
تم فساد کرو
تُفْسِدُوْا
زمین میں
فِى الْاَ رْضِ
وہ کہتے ہیں
قَالُوْٓا
بیشک
اِنَّمَا
ہم تو
نَحْنُ
اصلاح کرنے والے ہیں
مُصْلِحُوْنَ
اصلاح کرنے والے ہیں

جب کبھی ان سے کہا گیا کہ زمین پر فساد برپا نہ کرو تو انہوں نے یہی کہا کہ ہم تو اصلاح کرنے والے ہیں

تفسير

اَلَا ۤ اِنَّهُمْ هُمُ الْمُفْسِدُوْنَ وَلٰـكِنْ لَّا يَشْعُرُوْنَ

اَلَآ
خبردار
اِنَّھُمْ
بیشک وہ
ھُمُ
وہی ہیں
الْمُفْسِدُوْنَ
جو فساد کرنے والے ہیں
وَلٰكِنْ
لیکن
لَّا
نہیں
يَشْعُرُوْنَ
وہ شعور رکھتے ہیں

خبردار! حقیقت میں یہی لوگ مفسد ہیں مگر انہیں شعور نہیں ہے

تفسير

وَاِذَا قِيْلَ لَهُمْ اٰمِنُوْا كَمَاۤ اٰمَنَ النَّاسُ قَالُوْاۤ اَنُؤْمِنُ كَمَاۤ اٰمَنَ السُّفَهَاۤءُ ۗ اَلَاۤ اِنَّهُمْ هُمُ السُّفَهَاۤءُ وَلٰـكِنْ لَّا يَعْلَمُوْنَ

وَ
اور
اِذَا
کہا جاتا ہے
قِيْلَ
واسطے ان کے
لَھُمْ
ایمان لے آؤ
اٰمِنُوْا
جیسا کہ
كَمَآ
ایمان لائے
اٰمَنَ
لوگ
النَّاسُ
وہ کہتے ہیں
قَالُوْٓا
کیا
اَ
ہم ایمان لائیں
نُؤْمِنُ
جیسا کہ
كَمَآ
ایمان لائے
اٰمَنَ
بیوقوف
السُّفَهَاۗءُ
خبر دار
اَلَآ
بیشک وہ
اِنَّھُمْ
وہی ہیں
ھُمُ
جو بیوقوف ہیں
السُّفَهَاۗءُ
لیکن
وَلٰكِنْ
نہیں
لَّا
وہ علم رکھتے
يَعْلَمُوْنَ
وہ علم رکھتے

اور جب ان سے کہا گیا جس طرح دوسرے لوگ ایمان لائے ہیں اسی طرح تم بھی ایمان لاؤ تو انہوں نے یہی جواب دیا "کیا ہم بیوقوفوں کی طرح ایمان لائیں؟" خبردار! حقیقت میں تو یہ خود بیوقوف ہیں، مگر یہ جانتے نہیں ہیں

تفسير

وَاِذَا لَقُوْا الَّذِيْنَ اٰمَنُوْا قَالُوْاۤ اٰمَنَّا ۚ وَاِذَا خَلَوْا اِلٰى شَيٰطِيْنِهِمْۙ قَالُوْاۤ اِنَّا مَعَكُمْۙ اِنَّمَا نَحْنُ مُسْتَهْزِءُوْنَ

وَ
اور
اِذَا
ملاقات کرتے ہیں
لَقُوا
ان لوگوں سے
الَّذِيْنَ
جو ایمان لائے
اٰمَنُوْا
وہ کہتے ہیں
قَالُوْٓا
ایمان لائے ہم
اٰمَنَّا
اور
وَ
جب
اِذَا
وہ اکیلے ہوتے ہیں
خَلَوْا
طرف
اِلٰى
اپنے شیطانوں کے
شَيٰطِيْنِهِمْ
وہ کہتے ہیں
قَالُوْٓا
بیشک ہم
اِنَّا
تمہارے ساتھ ہیں
مَعَكُمْ
بیشک
اِنَّمَا
ہم تو
نَحْنُ
مذاق کرنے والے ہیں
مُسْتَهْزِءُوْنَ
مذاق کرنے والے ہیں

جب یہ اہل ایمان سے ملتے ہیں، تو کہتے ہیں کہ ہم ایمان لائے ہیں اور جب علیحدگی میں اپنے شیطانوں سے ملتے ہیں، تو کہتے ہیں کہ اصل میں تو ہم تمہارے ساتھ ہیں اور ان لوگوں سے محض مذاق کر رہے ہیں

تفسير

اَللّٰهُ يَسْتَهْزِئُ بِهِمْ وَيَمُدُّهُمْ فِىْ طُغْيَانِهِمْ يَعْمَهُوْنَ

اَللّٰهُ
اللہ
يَسْتَهْزِئُ
مذاق کرے گا / مذاق کرتا ہے
بِهِمْ
ساتھ ان کے
وَ
اور
يَمُدُّھُمْ
ان کی سرکشی میں
فِىْ طُغْيَانِهِمْ
وہ بھٹک رہے ہیں/ اندھے بنے پھرتے ہیں
يَعْمَھُوْنَ
وہ بھٹک رہے ہیں/ اندھے بنے پھرتے ہیں

اللہ ان سے مذاق کر رہا ہے، وہ ان کی رسی دراز کیے جاتا ہے، اور یہ اپنی سرکشی میں اندھوں کی طرح بھٹکتے چلے جاتے ہیں

تفسير

اُولٰۤٮِٕكَ الَّذِيْنَ اشْتَرَوُا الضَّلٰلَةَ بِالْهُدٰى ۖ فَمَا رَبِحَتْ تِّجَارَتُهُمْ وَمَا كَانُوْا مُهْتَدِيْنَ

اُولٰۗىِٕكَ
یہی ہیں
الَّذِيْنَ
وہ لوگ
اشْتَرَوُا
جنہوں نے خرید لی
الضَّلٰلَةَ
گمراہی
بِالْهُدٰى
بدلے ہدایت کے
فَمَا
تو نہ
رَبِحَتْ
فائدہ مند ہوئی / فائدہ دیا
تِّجَارَتُھُمْ
تجارت ان کی نے
وَ
اور
مَا
تھے وہ
كَانُوْا
ہدایت پانے والے
مُهْتَدِيْنَ
ہدایت پانے والے

یہ وہ لوگ ہیں جنہوں نے ہدایت کے بدلے گمراہی خرید لی ہے، مگر یہ سودا ان کے لیے نفع بخش نہیں ہے اور یہ ہرگز صحیح راستے پر نہیں ہیں

تفسير

مَثَلُهُمْ كَمَثَلِ الَّذِى اسْتَوْقَدَ نَارًا ۚ فَلَمَّاۤ اَضَاۤءَتْ مَا حَوْلَهٗ ذَهَبَ اللّٰهُ بِنُوْرِهِمْ وَتَرَكَهُمْ فِىْ ظُلُمٰتٍ لَّا يُبْصِرُوْنَ

مَثَلُھُمْ
مثال ان کی
كَمَثَلِ
جیسے مثال کی
الَّذِى
اس شخص کی
اسْـتَوْقَدَ
جس نے جلائی
نَارًا
آگ
فَلَمَّآ
پھر جب
اَضَاۗءَتْ
اس نے روشن کردیا
مَا حَوْلَهٗ
ماحول اس کا
ذَھَبَ
لے گیا
اللّٰهُ
اللہ
بِنُوْرِهِمْ
نور ان کا
وَ
اور
تَرَكَھُمْ
چھوڑ دیا ان کو
فِىْ ظُلُمٰتٍ
اندھیروں میں
لَّا
نہیں
يُبْصِرُوْنَ
وہ دیکھ پاتے

اِن کی مثال ایسی ہے جیسے ایک شخص نے آگ روشن کی اور جب اُس نے سارے ماحول کو روشن کر دیا تو اللہ نے اِن کا نور بصارت سلب کر لیا اور انہیں اس حال میں چھوڑ دیا کہ تاریکیوں میں انہیں کچھ نظر نہیں آتا

تفسير

صُمٌّۢ بُكْمٌ عُمْىٌ فَهُمْ لَا يَرْجِعُوْنَ ۙ

ۻ
بہرے ہیں
بُكْمٌ
گونگے ہیں
عُمْىٌ
اندھے ہیں
فَھُمْ
تو وہ
لَا
نہیں
يَرْجِعُوْنَ
وہ پلیٹیں گے / وہ لوٹیں گے

یہ بہرے ہیں، گونگے ہیں، اندھے ہیں، یہ اب نہ پلٹیں گے

تفسير

اَوْ كَصَيِّبٍ مِّنَ السَّمَاۤءِ فِيْهِ ظُلُمٰتٌ وَّرَعْدٌ وَّبَرْقٌ ۚ يَجْعَلُوْنَ اَصَابِعَهُمْ فِىْۤ اٰذَانِهِمْ مِّنَ الصَّوَاعِقِ حَذَرَ الْمَوْتِۗ وَاللّٰهُ مُحِيْطٌۢ بِالْكٰفِرِيْنَ

اَوْ
یا
كَصَيِّبٍ
جیسے مثال ہے زور دار پیش کی
مِّنَ السَّمَاۗءِ
آسمان سے
فِيْهِ
اس میں
ظُلُمٰتٌ
اندھیرے ہیں
وَّرَعْدٌ
کڑک
وَّبَرْقٌ
بجلی ہے
يَجْعَلُوْنَ
وہ ڈال لیتے ہیں
اَصَابِعَھُمْ
انگلیاں اپنی
فِىْٓ اٰذَانِهِمْ
اپنے کانوں میں
مِّنَ الصَّوَاعِقِ
بجلی کی کڑک سے
حَذَرَ
ڈرتے ہوئے / ڈر کر / بچنے کے لئے
الْمَوْتِ
موت سے
وَ
اور
اللّٰهُ
احاطہ کیے ہوئے ہے
مُحِيْطٌۢ
کافروں کا
بِالْكٰفِرِيْنَ
کافروں کا

یا پھر ان کی مثال یوں سمجھو کہ آسمان سے زور کی بارش ہو رہی ہے اور اس کے ساتھ اندھیری گھٹا اور کڑک چمک بھی ہے، یہ بجلی کے کڑاکے سن کر اپنی جانوں کے خوف سے کانوں میں انگلیاں ٹھو نسے لیتے ہیں اور اللہ اِن منکرین حق کو ہر طرف سے گھیرے میں لیے ہوئے ہے

تفسير

يَكَادُ الْبَرْقُ يَخْطَفُ اَبْصَارَهُمْ ۗ كُلَّمَاۤ اَضَاۤءَ لَهُمْ مَّشَوْا فِيْهِ ۙ وَاِذَاۤ اَظْلَمَ عَلَيْهِمْ قَامُوْا ۗ وَلَوْ شَاۤءَ اللّٰهُ لَذَهَبَ بِسَمْعِهِمْ وَاَبْصَارِهِمْ ۗ اِنَّ اللّٰهَ عَلٰى كُلِّ شَىْءٍ قَدِيْرٌ

يَكَادُ
قریب ہے
الْبَرْقُ
بجلی
يَخْطَفُ
اچک لے / چھین لے
اَبْصَارَھُمْ
نگاہیں ان کی
كُلَّمَآ
جب کبھی
اَضَاۗءَ
اس نے روشنی کی
لَھُمْ
ان کے لئے
مَّشَوْا
وہ چل پڑے
فِيْهِ
اس میں
وَ
اور
اِذَآ
اس نے اندھیرا کیا
اَظْلَمَ
اوپر ان کے
عَلَيْهِمْ
وہ کھڑے ہوگئے
قَامُوْا
اور
وَ
اگر
لَوْ
چاہے
شَاۗءَ
اللہ
اللّٰهُ
ضرور لے جائے
لَذَھَبَ
سماعت ان کی
بِسَمْعِهِمْ
اور
وَ
نگاہیں ان کی
اَبْصَارِهِمْ
بیشک
اِنَّ
اللہ
اللّٰهَ
اوپر
عَلٰي
ہر
كُلِّ
چیز کے
شَىْءٍ
قدرت والا ہے
قَدِيْرٌ
قدرت والا ہے

چمک سے ان کی حالت یہ ہو رہی ہے کہ گویا عنقریب بجلی اِن کی بصارت اُچک لے جائے گی جب ذرا کچھ روشنی انہیں محسوس ہوتی ہے تو اِس میں کچھ دور چل لیتے ہیں اور جب ان پر اندھیرا چھا جاتا ہے تو کھڑ ے ہو جاتے ہیں اللہ چاہتا تو ان کی سماعت اور بصارت بالکل ہی سَلب کر لیتا، یقیناً وہ ہر چیز پر قادر ہے

تفسير